29.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

اردو کے مشہور شاعر منور رانا لکھنؤ میں انتقال کرگئے

ضرور جانیے

اردو کے مشہور شاعر منور رانا 71 سال کی عمر میں لکھنؤ میں انتقال کر گئے۔

منور رانا کی بیٹی سامعہ رانا کے مطابق ان کے والد کو تشویشناک حالت کی وجہ سے وینٹی لیٹر پر رکھا گیا تھا لیکن انہیں زندہ نہیں کیا جا سکا۔

بیٹی سمیعہ کا کہنا ہے کہ ان کے والد کا انتقال اتوار کی رات ہوا جبکہ ان کی تدفین آج کی جائے گی۔

منور رانا کی بیٹی سامعہ نے اپنی موت سے قبل ایک ویڈیو میں بتایا تھا کہ ان کے والد کی طبیعت گزشتہ دو تین روز سے خراب ہے، ڈائیلاسز کے دوران ان کے پیٹ میں شدید درد تھا، ڈاکٹروں نے سی ٹی اسکین کیا تو ان کے پیٹ میں کچھ پایا گیا۔ مسئلہ پایا گیا اور پھر اس کا آپریشن کیا گیا۔

بتایا جارہا ہے کہ منور رانا کو دل کی تکلیف کی وجہ سے لکھنؤ کے ایک اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا، اس سے قبل وہ گردے اور دل کے مسائل میں مبتلا تھے، منور رانا کے پسماندگان میں ان کی بیوہ، بیٹا اور 4 بیٹیاں ہیں۔

منور رانا شاعری کی زندگی تھے، منور رانا کی کچھ غزلوں کو دنیا بھر میں پذیرائی ملی، انہیں 2014 میں ان کی نظم ‘شہدبہ’ پر ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ سے نوازا گیا جبکہ ان کی نظم ‘مان’ کو مقبول ترین نظموں میں شمار کیا جاتا ہے۔ کیا جا چکا ہے

پسندیدہ مضامین

شاعریاردو کے مشہور شاعر منور رانا لکھنؤ میں انتقال کرگئے