25.9 C
Karachi
Friday, April 19, 2024

آئی ایم ایف پروگرام میں جانا ناگزیر، رواں ہفتے مذاکرات شروع ہونگے: وزیر خزانہ

ضرور جانیے

اسلام آباد: نومنتخب وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے تصدیق کی ہے کہ پاکستان اہم مذاکرات کے لیے آئی ایم ایف سے باضابطہ درخواست کرنے جا رہا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایوان صدر میں صحافیوں سے گفتگو اور دی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ توقع ہے کہ آئی ایم ایف کے عملے کے ساتھ یہ مذاکرات رواں ہفتے شروع ہوں گے کیونکہ آئی ایم ایف پروگرام میں جانا ناگزیر ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ رواں مالی سال 2024 مشکل سال ہوگا لیکن جلد ہی میڈیا کے ساتھ بیٹھ کر تمام معاملات پر بات کروں گا، بریفنگ کروں گا، پاکستان کو درپیش مسائل کے حل کے لیے اپنی تمام صلاحیتیں بروئے کار لاؤں گا، اب بات کرنے کے لیے مزید چیزیں ہیں۔ لیکن اب کارروائی کا وقت ہے.

جب وزیر خزانہ سے موجودہ اسٹینڈ بائی ایگریمنٹ پروگرام کے حوالے سے آئی ایم ایف کو باضابطہ درخواست بھیجنے کے امکان کے بارے میں پوچھا گیا جو 12 اپریل 2024 کو ختم ہونے والا ہے تو انہوں نے جواب دیا کہ فنڈ کے عملے سے بات چیت اسی ہفتے ہوگی۔ شروع کریں گے.

دوسری جانب ڈاکٹر اشفاق حسن نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ دفاعی بجٹ ادھار وسائل پر چل رہا ہے، ملکی سلامتی کا کیا ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق اعلیٰ حکومتی ذرائع نے دی نیوز کو بتایا ہے کہ پاکستان کی جانب سے واشنگٹن ڈی سی میں آئی ایم ایف ہیڈ کوارٹرز کو ای میل بھیجی گئی ہے جس میں 3 ارب ڈالر کے جاری اسٹینڈ بائی ایگریمنٹ پروگرام کے تحت اہم مذاکرات کیے جائیں گے اور اس کے 1.1 ارب ڈالر کی آخری قسط جاری کی جاسکتی ہے۔

پاکستان 6 ارب ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت کے لیے 6 ارب ڈالر کے نئے وسط مدتی بیل آؤٹ پیکج کے لیے مذاکرات شروع کرنے کی بھی درخواست کر سکتا ہے۔

آئی ایم ایف سے ماحولیاتی فنانسنگ میں 1.5 سے 2 ارب ڈالر حاصل کرکے اسے مزید مستحکم کرنے کی کوشش کرنے کا قوی امکان ہے۔

پسندیدہ مضامین

کاروبارآئی ایم ایف پروگرام میں جانا ناگزیر، رواں ہفتے مذاکرات شروع ہونگے:...