25.9 C
Karachi
Friday, April 19, 2024

ھمارا مشفق رب

ضرور جانیے

ايسا كوئ مشفق بھی نہ ھوگا نہ کہیں ھے
بخشش کا سمندر ھے جو رحمت کا
دھنی ھے

ہر آن جو بندوں کو بڑے پیار سے دیکھے
مجرم ھو کہ مسلم ھو وہ ہر اک پہ سخی ھے

ایسا کوئ رزاق ھے نہ وہاب کہیں ھے
عام اس کے خزانے ہیں وہ ایسا غنی ھے

بے عیب وہ ایسا ھے کہ ہر عیب سے عاری
نہ اس کی نظیر ھے نہ مثل اس کا کوئ ھے

کل عمر میں ہر حکم کو توڑا بھی ھو جس نے
دل سے جو ھو نادم تو وہ بس اس کا ولی ھے

بندے کو یہ زیبا نھی خالق سے خصومت
قہار بھی ایسا ھے پکڑ اس کی قوی ھے

اصرار گناھوں سے جو بھر لیتے ھیں دامن
سن لیں کہ مہرباں نہیں اس پہ جو جری ھے

کچھ ھم نے گرائے جو آنسوئے ندامت
شاکر ھے قدرداں ھے عطا اس کی بڑی ھے

جنت میں جو خالق کی زیارت کا ھو مشتاق
تقوی کی گزرگاہ پہ چلتا ھو تبھی ھے

اس ذات کے جلوؤں کی بھی کیا بات ھے چھیڑی
جس ذات کے جلوؤں پہ فدا چشم نبی ھے(صلی اللہ علیہ وسلم )

تڑپیں گے جو اک جلوہ رب دیکھیں گے اس دن
آنکھوں میں نہیں تاب جبین سجدہ نگیں ھے

دیکھو میرے بندوں میں وہی رب ھوں تمھارا
اب میری رضا تم پہ ابدی ابدی ھے

انعام یہ اس دار مشقت کا ملا ھے
تھوڑی سی مشقت کا صلہ فردوس بریں ھے

اے کاش مسلمان یہ فریاد سمجھ لیں
بچ جائیں گناھوں سے تو بس بات بنی ھے

بندی کو بھی مولا تیری بخشش کی طلب ھے
میری تو تمنی فقط اک تیری خوشی ھے

کلام اھلیہ ڈاکٹر عثمان انور

پسندیدہ مضامین

اردوسٹوریزھمارا مشفق رب