25.9 C
Karachi
Friday, April 19, 2024

بلوچ طلبہ عدم بازیابی کیس: ’وزیراعظم، وزیرداخلہ کام نہیں کرسکتے تو عہدے چھوڑ دیں‘

ضرور جانیے

اسلام آباد ہائی کورٹ نے 12 بلوچ طالب علموں کی جبری گمشدگی سے متعلق درخواست پر آج کی سماعت میں پیش نہ ہونے پر نگران وزیراعظم انوار الحق کاکڑ کو 28 فروری کو دوبارہ ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ وزیراعظم، وزیر دفاع، سیکریٹری دفاع، وزیر داخلہ اور سیکریٹری داخلہ کام نہ کر سکیں تو اپنے عہدوں سے مستعفی ہو جائیں، اس وقت کا خوف ہے جب کوئی قانون نافذ کرنے والے اداروں کے خلاف کھڑا ہو جائے گا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے درخواست پر سماعت کی۔ عدالت نے نگران وزیراعظم انور الحق کاکڑ، نگران وزیر داخلہ اور سیکریٹری دفاع کو ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا۔

سماعت کے دوران سیکرٹری داخلہ آفتاب درانی، اٹارنی جنرل منصور اعوان اور درخواست گزار ایمن مزاری پیش ہوئے۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے استفسار کیا کہ 12 لاپتہ طالب علم ابھی تک بازیاب نہیں ہوئے؟ اٹارنی جنرل نے کہا کہ میری معلومات کے مطابق ابھی تک 8 طالب علم بازیاب نہیں ہوئے۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے نگران وزراء اور سیکریٹری دفاع سے متعلق استفسار کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم دوسری بار نہیں آئے؟ اس کیس کی سماعت آج 24 تاریخ کو ہو رہی ہے، دہشت گردی تو دور کی بات، ان کے خلاف قتل، چوری سمیت کوئی مقدمہ درج نہیں کیا گیا ہے اور نہ ہی اسی تنظیم کے لوگوں سمیت جن لوگوں کو ملزم بنایا گیا ہے ان کے بارے میں کوئی دستاویز یا معلومات شیئر نہیں کی گئی ہیں۔ ایک کمیٹی بنائیں۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے ریمارکس دیے کہ ساڑھے 3 سال حکومت تھی، پھر 16 ماہ کے لیے دوسری حکومت۔ تین حکومتوں نے لاپتہ بلوچ طلباء کی بازیابی کے لئے ابھی تک کچھ نہیں کیا ہے۔ یہاں اداروں کے خلاف براہ راست الزامات لگائے جاتے ہیں، یہاں تک کہ اداروں کے افسران پر بھی کروڑوں روپے تک کا جرمانہ عائد کیا گیا، لیکن کوئی نتیجہ نہیں نکلا۔

شیر افضل مروت نے عدالت کو گزشتہ روز ان کے گھر پر چھاپے سے متعلق آگاہ کیا، عدالت نے استفسار کیا کہ اسلام آباد پولیس دوپہر ڈیڑھ بجے شیر افضل مروت کے گھر کیوں گئی۔ ہم اداروں کے چوروں اور ڈکیتیوں سے خود کو بچانے سے نہیں ڈرتے۔

عدالت نے آئی جی اسلام آباد اور سی ٹی ڈی کے سربراہ کو آئندہ سماعت پر طلب کرلیا۔ جسٹس محسن اختر کیانی نے استفسار کیا کہ اٹارنی جنرل سیاسی حکومت بنانے جا رہے ہیں یا نہیں؟

عدالت نے اٹارنی جنرل کی درخواست پر سماعت 28 فروری تک ملتوی کردی۔

گزشتہ سماعت کے دوران عدالت نے ریمارکس دیے تھے کہ جبری گمشدگی میں ملوث افراد کو سزائے موت دی جانی چاہیے۔ نگران وزیراعظم اور دیگر حکام پیش نہ ہوئے تو ان کے خلاف مقدمہ درج کرنے کے احکامات جاری کیے جائیں گے۔

نگران وزیراعظم انوار الحق کاکڑ دوسرے وزیراعظم ہیں جنہیں جبری گمشدگی کے معاملے پر اسلام آباد ہائی کورٹ نے ذاتی حیثیت میں طلب کیا ہے۔

اس سے قبل بلوچستان سے تعلق رکھنے والے افراد کی جبری گمشدگی کے معاملے پر سابق وزیراعظم شہباز شریف بھی اسلام آباد ہائی کورٹ میں پیش ہوئے تھے۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانبلوچ طلبہ عدم بازیابی کیس: ’وزیراعظم، وزیرداخلہ کام نہیں کرسکتے تو عہدے...