30.9 C
Karachi
Tuesday, April 23, 2024

‘اٹک جیل میں عمران خان کی کوٹھری میں 5 فٹ اونچی دیواروں کے ساتھ نیا واش روم، دروازہ تعمیر’

ضرور جانیے

ترجمان محکمہ جیل خانہ جات پنجاب نے واضح کیا ہے کہ اٹک جیل میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین اور سابق وزیراعظم عمران خان کے لیے پانچ فٹ اونچی دیواروں والا نیا واش روم اور ایک دروازہ تعمیر کیا گیا ہے۔

ترجمان کی جانب سے یہ وضاحت اس وقت سامنے آئی جب ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج (اے ڈی ایس جے) اٹک شفقت اللہ خان نے سابق وزیراعظم کے سیل کا دورہ کیا اور انہیں واش روم میں پرائیویسی کی کمی سمیت زندگی کے حالات سے متعلق ان کی شکایات اور خدشات کو ‘حقیقی’ پایا۔

پی پی ڈی کی جانب سے جاری وضاحت میں کہا گیا ہے کہ پاکستان جیل خانہ جات رولز 1978 کے رولز 257 اور 771 کے تحت تمام سہولیات پی ٹی آئی سربراہ کو فراہم کی گئی ہیں۔

باتھ روم میں پرائیویسی نہ ہونے کے خدشات کو دور کرتے ہوئے ترجمان نے کہا کہ چیئرمین پی ٹی آئی کے سیل میں نیا واش روم تعمیر کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ واش روم کی دیواریں پانچ فٹ اونچی رکھی گئی ہیں اور ایک دروازہ بھی نصب کیا گیا ہے، واش روم میں ویسٹرن کموڈ اور واش بیسن بھی نصب کیا گیا ہے۔

بدعنوانی کے الزام

عمران خان اس ماہ کے اوائل میں توشہ خانہ کیس میں بدعنوانی کے الزام میں اٹک جیل میں تین سال قید کی سزا کاٹ رہے ہیں۔

پیر کو جاری اور 15 اگست کو مرتب کیے گئے اس ریمارکس میں جج نے کہا کہ خان نے اپنے دورے کے دوران اپنی پرائیویسی کی خلاف ورزی اور جیل کے اندر موجودہ حالات زندگی کے بارے میں ‘شدید تشویش’ کا اظہار کیا تھا۔

انہوں نے اپنی جیل کی سلاخوں کے سامنے لگے سی سی ٹی وی کیمرے کے بارے میں اہم تشویش کا اظہار کیا، جو پانچ سے چھ فٹ کے فاصلے پر واقع ہے، جو ایک کھلے باتھ روم اور بیت الخلا کا احاطہ کرتا ہے۔

سی سی ٹی وی کیمروں کے حوالے سے ترجمان کا کہنا تھا کہ وہ کمرے کے باہر لگائے گئے تھے۔

عمران خان کے کمرے کے باہر ان کی اور جیل کی سیکیورٹی کے لیے سی سی ٹی وی کیمرے نصب کیے گئے ہیں۔ نہ صرف ڈسٹرکٹ جیل اٹک بلکہ پنجاب کی دیگر جیلوں میں بھی 4 ہزار سے زائد سی سی ٹی وی کیمرے نصب کیے گئے ہیں۔

انہوں نے مزید بتایا کہ غسل صابن، پرفیوم، ایئر فریشنر، تولیہ، ٹشو پیپرز کے ساتھ ساتھ بستر، تکیے، گدے، میز، کرسیاں، ایئر کنڈیشنر اور ایگزوسٹ پنکھے جیسی سہولیات فراہم کی گئی ہیں۔

خصوصی کھانا

انہوں نے مزید کہا کہ خان کے لئے پانچ ڈاکٹر مقرر کیے گئے ہیں، جن میں سے ایک ہر وقت دستیاب تھا، اور خان کو ڈاکٹروں کے ذریعہ چیک کرنے کے بعد صرف “خصوصی” کھانا دیا گیا تھا۔

ترجمان نے مزید کہا کہ پھل، شہد، کھجوریں، نماز کی چٹائی، قرآن اور کتابیں بھی دی گئی ہیں۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ خان نے شکایت کی کہ ان کی اہلیہ اور وکیلوں کو ان تک آسان رسائی حاصل نہیں تھی۔ تاہم ترجمان کا کہنا تھا کہ چیئرمین پی ٹی آئی کے اہل خانہ منگل کو ان سے ملاقات کرتے ہیں جبکہ ان کے وکلا جمعرات کو ان سے ملاقات کرتے ہیں۔

گزشتہ ہفتے عمران خان کی اہلیہ بشریٰ بی بی نے بھی ڈسٹرکٹ جیل اٹک میں قید کے دوران اپنے شوہر کو زہر دیے جانے کے خدشے کا اظہار کیا تھا۔

17 اگست کو سیکریٹری داخلہ پنجاب کو لکھے گئے خط میں عمران خان کی اہلیہ نے سابق وزیراعظم کو اٹک کی ڈسٹرکٹ جیل سے راولپنڈی کی اڈیالہ جیل منتقل کرنے کا مطالبہ کیا تھا اور خدشہ ظاہر کیا تھا کہ جیل میں انہیں زہر دیا جا سکتا ہے۔ خط کے مطابق سابق وزیراعظم کی زندگی خطرے میں ہے کیونکہ اس سے قبل بھی ان پر دو بار حملہ کیا گیا تھا جس میں ایک بار ان کے جسم پر گولیاں چلائی گئی تھیں۔

پاکستان تحریک انصاف کی کور کمیٹی کے اجلاس میں ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج شفقت اللہ خان کے ریمارکس پر روشنی ڈالی گئی جنہوں نے اٹک جیل میں ان کے ساتھ ناروا سلوک کی تصدیق کی۔ پی ٹی آئی کا کہنا ہے کہ یہ رپورٹ ان کے اس دعوے کی تائید کرتی ہے کہ پی ٹی آئی چیئرمین کے ساتھ اٹک جیل میں غیر انسانی اور غیر قانونی سلوک کیا گیا۔

پنجاب حکومت اور جیل حکام

دریں اثنا نگران وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے جیو نیوز کے پروگرام ‘آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ’ میں کہا کہ پی ٹی آئی سربراہ کو زائرین سے ملنے کی اجازت دی گئی اور انہوں نے جس جیل کلاس کے لیے درخواست دی تھی اس کے مطابق سہولیات فراہم کی گئیں۔ بگٹی نے کہا کہ وہ پنجاب حکومت اور جیل حکام سے سی سی ٹی وی کیمرے جیسے انسپکشن رپورٹ میں اٹھائے گئے دیگر معاملات کے بارے میں ضرور پوچھیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہم اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ وہ تمام سہولیات اور جیل کی کلاس فراہم کی جائے جس کے لئے انہوں نے (عمران خان) نے درخواست دی تھی اور وہ قانون کے مطابق سابق وزیر اعظم کی حیثیت سے مستحق ہیں۔ جہاں تک میں جانتا ہوں، ان کے پاس بستر ہے اور انہیں اخبارات فراہم کیے جاتے ہیں لیکن انہیں صرف وہی سہولیات ملیں گی جن کی متعلقہ قوانین اجازت دیتے ہیں۔

پسندیدہ مضامین

پاکستان'اٹک جیل میں عمران خان کی کوٹھری میں 5 فٹ اونچی دیواروں...