25.9 C
Karachi
Friday, April 19, 2024

اسلام آباد ہائی کورٹ نے عمران خان کو اٹک جیل میں رکھنے کا حکم کس نے دیا؟

ضرور جانیے

اسلام آباد-اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم عمران خان کو اڈیالہ جیل کے بجائے اٹک جیل میں رکھنے کا حکم کس نے دیا؟

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ عامر فاروق نے توشہ خانہ کیس میں 5 اگست کو گرفتاری کے بعد چیئرمین تحریک انصاف کی درخواست پر سماعت کے دوران اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل کو قیدیوں کے تبادلے کے تعین کے ذمہ داروں کے بارے میں جاننے اور 11 اگست تک رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی۔

عمران خان کی جانب سے دائر درخواست میں انہیں اٹک جیل سے اڈیالہ جیل منتقل کرنے کی استدعا کی گئی ہے اور ان کے ذاتی معالج ڈاکٹر فیصل سلطان سے طبی معائنے کی اجازت کے ساتھ ساتھ اے کلاس سہولیات کی درخواست کی گئی ہے۔

خان نے عدالت سے اپنی قانونی ٹیم، اہل خانہ اور پارٹی کے سینئر ممبروں سے ملاقات کی اجازت کی بھی اپیل کی ہے۔

ریمارکس

سماعت کے دوران چیف جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے کہ اسلام آباد کی جیل نہ ہونے کی وجہ سے قیدیوں کو راولپنڈی کی اڈیالہ جیل میں رکھا جاتا ہے۔

تاہم انہوں نے قیدی کو جیل بھیجنے کے طریقہ کار کے بارے میں دریافت کیا۔

جج ہمایوں دلاور کی جانب سے جاری کیے گئے سزا کے احکامات کے مطابق پی ٹی آئی کے سربراہ کو راولپنڈی کی اڈیالہ جیل بھیجا جانا تھا۔ تاہم گزشتہ سال اپریل میں تحریک عدم اعتماد کے بعد عہدے سے ہٹائے جانے والے سابق وزیراعظم کو اٹک لے جایا گیا تھا۔

عمران خان کے وکیل شیر افضل مروت نے عدالت کو بتایا کہ حکومت کے پاس کسی قیدی کو پنجاب کی کسی بھی جیل میں منتقل کرنے کا اختیار ہے۔

جسٹس عمر فاروق نے ریمارکس دیے کہ نواز شریف کی کوٹ لکھپت جیل منتقلی کی درخواست منظور کرلی گئی۔

پی ٹی آئی سربراہ کے وکیل نے کہا کہ عمران خان جیل قوانین کے مطابق اے کلاس کی سہولت حاصل کرسکتے ہیں لیکن چونکہ ڈسٹرکٹ جیل اٹک اے کلاس نہیں ہے اس لیے انہیں وہاں رکھا جا رہا ہے اور وہ بھی قید تنہائی میں۔

ایڈووکیٹ مروت نے کہا کہ چیئرمین پی ٹی آئی کو بیرک کے بجائے سیل میں رکھا گیا ہے، سابق وزیراعظم نے بارش کا پانی ان کے سیل میں داخل ہونے کی بھی شکایت کی۔

پی ٹی آئی سربراہ

وکیل مروت نے عدالت کو پی ٹی آئی سربراہ کی اپنے وکلاء سے ملاقات کے شیڈول میں تاخیر سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ عدالتی حکم کے باوجود عمران خان کو ان کے وکلاء سے ملاقات کی اجازت نہیں دی گئی۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے وکیل سے استفسار کیا کہ کیا انہوں نے اجلاس شیڈول نہ کرنے کی کوئی وجہ بتائی؟

وکیل نے جواب دیا کہ ملاقات کا وقت شام 6 بجے تک ہے جبکہ حکم دیر سے جاری کیا گیا۔

انہوں نے مزید شکایت کی کہ عمران خان کے ایک اور وکیل نعیم حیدر پنجوتھا سے وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) نے تفتیش کی آڑ میں منگل کو “نو گھنٹے” تک پوچھ گچھ کی۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ خواجہ حارث کو بھی ایف آئی اے نے طلب کیا ہے۔ مروت نے ان گرفتاریوں کو ‘غیر قانونی’ قرار دیا۔

چیف جسٹس نے وکیل کی شکایات سننے کے بعد ریمارکس دیے کہ تحقیقات کے نام پر کسی کو ہراساں نہ کیا جائے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ایک قیدی کو قانون میں بیان کردہ حقوق دیے جانے چاہئیں۔

“ہر ایک کے حقوق ہیں. جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے کہ وکیل سے ملاقات سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔

عمران خان کے وکیل کو مخاطب کرتے ہوئے چیف جسٹس نے اصرار کیا کہ یہ سیاسی مسئلہ نہیں بننا چاہیے اور احاطے میں بھیڑ نہیں ہونی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ ایک ایک کرکے دو یا تین وکلاء کو ایک ساتھ چلنا چاہیے۔

عدالت سے درخواست کی گئی کہ کیس کی سماعت کل (جمعرات کو) کی جائے، جس پر اسلام آباد ہائی کورٹ کے جج نے طبیعت ناساز ہونے کی وجہ سے سماعت 11 اگست تک ملتوی کردی۔

پسندیدہ مضامین

پاکستاناسلام آباد ہائی کورٹ نے عمران خان کو اٹک جیل میں رکھنے...