25.9 C
Karachi
Friday, April 19, 2024

ویرات کوہلی کی آسٹریلیا کے خلاف غیر معمولی کارکردگی

ضرور جانیے

ویرات کوہلی کی آسٹریلیا کے خلاف غیر معمولی کارکردگی نے ہندوستان کو اوول میں ورلڈ ٹیسٹ چیمپیئن شپ کے فائنل میں غیر معمولی فتح کی امید دلائی ہے۔

444 رنز کے ریکارڈ اسکور تک پہنچنے کے لیے 280 رنز درکار ہونے کے باوجود ویرات کوہلی 44 رنز بنا کر ناٹ آؤٹ رہے جبکہ رہانے 20 رنز بنا کر آؤٹ رہے۔ یہ میچ جیتنا آسٹریلیا کے خلاف ہندوستان کی پچھلی فتوحات کو پیچھے چھوڑ دے گا ، لیکن آگے کا کام مشکل ہے کیونکہ ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ میں صرف چار ٹیموں نے چوتھی اننگز میں کامیابی سے 400 سے زیادہ رنز کا تعاقب کیا ہے۔

ہدف کے تعاقب

دریں اثنا آسٹریلیا کو اپنی پہلی بڑی مینز ٹرافی حاصل کرنے اور انگلینڈ کے خلاف ایشز سیریز کے افتتاحی میچ میں بھرپور جوش و خروش کے ساتھ کھیلنے کے لیے مزید سات وکٹوں کی ضرورت ہے۔ ہدف کے تعاقب کا آغاز روہت شرما کی متاثر کن چوکیوں سے ہوا، لیکن تنازعہ اس وقت پیدا ہوا جب شبھمن گل کیمرون گرین کے متنازعہ کیچ پر گر گئے۔ اس فیصلے نے بھارتی شائقین میں ہنگامہ برپا کر دیا تھا لیکن گرین نے اصرار کیا کہ انہوں نے اسے صاف ستھرا پکڑا۔

روہت اور چتیشور پجارا نے آسٹریلوی گیند بازوں پر حملے جاری رکھے اور پچھلے ڈبلیو ٹی سی فائنل میں اپنی شکست کو بہتر بنانے کی کوشش کی۔ تاہم روہت کو ناتھن لیون کے خلاف سوئپ شاٹ سے آؤٹ کیا گیا جبکہ پجارا کی اپر کٹ پر کوشش کے نتیجے میں ایلکس کیری نے آسان کیچ پکڑا۔ اس کے باوجود، کوہلی نے باؤنڈری اسکور کرکے کنٹرول حاصل کیا، جس پر ان کے پرستاروں کی جانب سے زبردست خوشی کا اظہار کیا گیا۔

آسٹریلیا نے اپنی دوسری اننگز میں 8 وکٹوں کے نقصان پر 270 رنز بنائے۔ بائیں ہاتھ کے اسپنر رویندر جڈیجہ نے گرین کے آؤٹ ہونے سمیت تین وکٹیں حاصل کیں۔ کیری نے ناقابل شکست 66 رنز کی اننگز کھیلکر اہم کردار ادا کیا اور اسٹارک کے ساتھ 93 رنز کی قابل قدر شراکت قائم کی۔

غیر معمولی رنز

اب جبکہ میچ اپنے آخری دن میں داخل ہو رہا ہے، ہندوستان کو ایک اہم چیلنج کا سامنا ہے، جسے ایک دہائی میں اپنی پہلی آئی سی سی ٹرافی حاصل کرنے کے لئے غیر معمولی رنز کے تعاقب کی ضرورت ہے۔ ان کے خلاف مشکلات کے باوجود ہندوستانی ٹیم کا اعتماد اور لڑنے کا جذبہ مضبوط ہے۔

ورلڈ ٹیسٹ چیمپیئن شپ فائنل کے اختتام پر دونوں ٹیموں کے درمیان سخت اور دلچسپ مقابلے کا وعدہ کیا گیا ہے۔

آسٹریلیا: ڈیوڈ وارنر، عثمان خواجہ، مارنس لبوشین، اسٹیو اسمتھ، ٹریوس ہیڈ، کیمرون گرین، ایلکس کیری، مچل اسٹارک، پیٹ کمنز (کپتان)، نیتھن لیون اور اسکاٹ بولنڈ۔

بھارت: روہت شرما (کپتان)، شبھمن گل، چتیشور پجارا، وراٹ کوہلی، اجنکیا رہانے، سریکر بھرت( وکٹ کیپر)، رویندر جڈیجہ، شردل ٹھاکر، امیش یادو، محمد شامی اور محمد سراج۔

پسندیدہ مضامین

کھیلویرات کوہلی کی آسٹریلیا کے خلاف غیر معمولی کارکردگی