29.9 C
Karachi
Sunday, May 19, 2024

کے پی میں پولیس چوکی پر راکٹ حملے کے بعد دو پولیس اہلکار ہلاک

ضرور جانیے

سوات کے علاقے مینگورہ میں نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے 2 پولیس اہلکار جاں بحق ہوگئے، حکام نے تصدیق کی ہے کہ خیبر پختونخوا میں دہشت گردی کے خلاف جنگ جاری ہے جس میں حالیہ مہینوں میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

کالعدم عسکریت پسند تنظیم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے گزشتہ سال نومبر میں اسلام آباد کے ساتھ جنگ بندی ختم کرنے کے بعد سے سیکیورٹی فورسز کے خلاف حملوں میں اضافہ کیا ہے۔

اس کے جواب میں، پاکستانی سیکورٹی فورسز نے عسکریت پسندوں کے خلاف اپنی کارروائیوں میں اضافہ کیا ہے کیونکہ وہ دہشت گردی کی لعنت کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کی کوشش کر رہے ہیں، جسے حالیہ دنوں میں کچل دیا گیا تھا۔

پولیس نے بتایا کہ دونوں کانسٹیبلوں عمرہ خان اور اشرف علی کو صبح مینگورہ کے سبزی منڈی علاقے کے قریب گولی مار ی گئی اور انہیں قریبی اسپتال لے جایا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گئے۔

سرچ آپریشن

جائے وقوعہ کو گھیرے میں لینے کے بعد پولیس نے سرچ آپریشن شروع کیا اور علاقے سے دو مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا۔

پولیس نے مزید کہا کہ فائرنگ میں ملوث تین مسلح حملہ آوروں کے فرار ہونے کی بھی اطلاعات ہیں اور ان کی گرفتاری کے لئے اقدامات کیے جارہے ہیں۔

سوات کا یہ واقعہ منگل کی رات پشاور کے علاقے سربند میں ایک پولیس چوکی پر حملے کے بعد پیش آیا ہے جس میں متانی میں ایک عسکریت پسند کی ہلاکت ہوئی تھی۔

دی نیوز کے مطابق دونوں جانب سے شدید فائرنگ کی اطلاع ملی اور چوکس پولیس نے جوابی کارروائی کی۔ تاہم قانون نافذ کرنے والے اداروں کو کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔

کچھ اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ ریموٹ پوسٹ پر ایک راکٹ فائر کیا گیا تھا۔

پشاور کے اس حصے میں پولیس اسٹیشنوں اور چوکیوں پر گزشتہ دو سالوں میں متعدد بار خودکار ہتھیاروں اور دستی بموں سے حملے ہو چکے ہیں۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانکے پی میں پولیس چوکی پر راکٹ حملے کے بعد دو پولیس...