29.9 C
Karachi
Sunday, May 19, 2024

مشرقی یوکرین میں روسی میزائل حملے میں دو افراد ہلاک، درجنوں زخمی

ضرور جانیے

مشرقی یوکرین میں روسی میزائل حملے میں دو افراد ہلاک، درجنوں زخمی.یوکرین کے مشرقی قصبے سلویانسک میں پیر کے روز روسی میزائلوں نے عمارتوں کو نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں کاروں میں سوار دو افراد ہلاک اور 30 سے زائد زخمی ہو گئے۔

پیر کی سہ پہر سڑک کے کنارے ایک خون آلود ٹوپی پڑی ہوئی تھی، جو کھڑی ایک کار کے بغل میں پڑی تھی، جس کی اگلی سیٹ خون سے لت پت تھی اور شیشے ٹوٹے ہوئے تھے۔

کرماٹورسک ڈسٹرکٹ پولیس کے ایک سینئر افسر دمترو نوگین نے صحافیوں کو بتایا کہ ‘تقریبا ساڑھے دس بجے شہر پر میزائل حملہ ہوا۔’

انہوں نے کہا کہ دو افراد پہلے ہی ہلاک ہو چکے ہیں۔

“یہ وہاں سے آنے والے لوگ تھے، اتفاق سے متاثرین۔

پولیس کا کہنا ہے کہ روسی ساختہ دو ایس 300 میزائل مرکز کے قریب سڑک سے ٹکرا گئے جس کے نتیجے میں 32 افراد زخمی ہوئے جن میں سے پانچ کی حالت انتہائی تشویشناک ہے۔

میئر ودیم لیاخ نے الگ سے بتایا کہ 36 افراد زخمی ہوئے ہیں۔

سلوویانسک تقریبا 25 میل (40 کلومیٹر) کی دوری پر واقع ہے کیونکہ کوا بخموت کے فرنٹ لائن ہاٹ اسپاٹ سے پرواز کرتا ہے، جہاں مہینوں سے خونی لڑائی جاری ہے۔ 2014 میں ماسکو کے حمایت یافتہ علیحدگی پسندوں نے اس پر مختصر وقت کے لیے قبضہ کر لیا تھا۔

ایک بڑی تین منزلہ انتظامی عمارت کے سامنے ایک بہت بڑا سوراخ تھا اور کھڑکیاں پھٹ گئی تھیں۔

نوگین نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ یہ ایک ریلوے دفتر تھا جہاں لوگوں کا طبی معائنہ کیا جا رہا تھا لیکن جائے وقوعہ پر موجود دو افراد نے اسے فوجی بھرتی کا مرکز قرار دیا۔

سب کچھ تباہ ہو گیا ہے

اے ایف پی کے صحافیوں نے ملبے سے ایک فلک جیکٹ کو ہٹاتے ہوئے دیکھا۔

34 سالہ اولیکسنڈر، جو اپنے چہرے پر پٹی باندھے باہر کھڑے تھے، نے اے ایف پی کو بتایا کہ وہ طبی معائنے کے لیے ایک ‘ملٹری انلسٹمنٹ سینٹر’ میں آئے تھے۔

باہر، کئی کاریں مکمل طور پر جل گئیں اور کھدائی کرنے والے ایک ٹرک نے ایک سے میسنری کا ایک بڑا ٹکڑا اٹھا لیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے افراد گاڑی چلا رہے تھے۔

”اس گاڑی سے ایک عورت مر گئی،” نوگین نے جلی ہوئی گاڑی کی طرف اشارہ کیا۔ ”اس سبز گاڑی سے ایک اور کی موت ہو گئی۔”

سامنے ایک چھوٹی سی عمارت کے باہر سے تین عورتیں ٹوٹے ہوئے شیشے کو صاف کر رہی تھیں۔

42 سالہ ہیئر ڈریسر یلینا نے روتے ہوئے کہا کہ ‘میں یہاں آئی تھی، میں یہاں کام کرتی ہوں۔

”ہم آئے اور دیکھا کہ سب کچھ تباہ ہو چکا ہے۔ یہ اچھا ہے کہ ہم وہاں نہیں تھے. اگر ہم کام کر رہے ہوتے تو شاید ہم زندہ نہ ہوتے۔ اس نے سب کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا ہوتا،” وہ صدمے میں دکھائی دیتی ہیں۔

”میرے کچھ گاہک فوجی بھرتی کے دفتر میں بھی کام کرتے تھے۔ خدا کا شکر ہے کہ وہ زندہ ہیں۔

ہمارے لوگوں پر ظلم و ستم

57 سالہ وکٹر نے خود کو ریلوے کا ملازم بتاتے ہوئے کہا کہ ‘میں یہاں کام کے لیے آیا تھا۔

”وہاں بہت سے لوگ موجود تھے۔ صرف میرے ساتھ، ۲۲ لوگ تھے، اس کے علاوہ یہاں کام کرنے والا عملہ بھی تھا،” انہوں نے کہا۔

”یہ لوگ ہمارے کاروبار پر آئے تھے۔ اس وقت دو راکٹ وں نے اڑان بھری۔

”تمام ٹائلیں دیواروں سے گر رہی تھیں۔ میں ایک کونے میں ایک دروازے میں چھپ گیا،” انہوں نے کہا۔

”میرے قریب ہی ایک شخص شدید زخمی ہو گیا تھا۔

یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے روس پر ‘دہشت گردی’ کا الزام عائد کیا ہے۔

انہوں نے سوشل میڈیا پر کہا کہ دشمن کو جان لینا چاہیے کہ یوکرین ہمارے لوگوں پر تشدد کو معاف نہیں کرے گا، ان ہلاکتوں اور زخموں کو معاف نہیں کرے گا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ڈونیٹسک کے مشرقی علاقے کے ایک اور قصبے دروزکیوکا کو بھی یتیم خانے کے احاطے کو دو میزائلوں سے نشانہ بنایا گیا۔

اے ایف پی کے صحافیوں نے ایک فوجی کو مرکز کے بند دروازوں سے گشت کرتے ہوئے دیکھا، جہاں کوئی بچہ نظر نہیں آ رہا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ ان کے کمانڈروں نے پریس تک رسائی پر پابندی عائد کر رکھی ہے۔

روسی افواج نے ڈونیٹسک کے علاقے پر قبضے کو اپنی اہم فوجی ترجیح بنا لیا ہے اور دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے مکمل طور پر کنٹرول نہ کرنے کے باوجود گزشتہ سال اس خطے پر قبضہ کر لیا تھا۔

پسندیدہ مضامین

انٹرنیشنلمشرقی یوکرین میں روسی میزائل حملے میں دو افراد ہلاک، درجنوں زخمی