29.9 C
Karachi
Sunday, May 19, 2024

ٹرائل کورٹ نے توشہ خانہ کا فیصلہ جلد بازی میں سنایا، چیف جسٹس

ضرور جانیے

اسلام آباد-چیف جسٹس پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیئے ہیں کہ توشہ خانہ کیس میں ٹرائل کورٹ کے جج نے جلد بازی میں فیصلہ سنایا۔

سپریم کورٹ نے توشہ خانہ کیس کو دوسری عدالت منتقل کرنے سے متعلق اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کی درخواست پر سماعت کی۔

4 اگست کو اسلام آباد ہائی کورٹ نے پی ٹی آئی کے سربراہ کے خلاف سرکاری تحائف کے ذخیرے سے متعلق بدعنوانی کے کیس کے قابل سماعت ہونے سے متعلق سیشن عدالت کے فیصلے کو عارضی ریلیف کے طور پر کالعدم قرار دیا تھا تاہم اس معاملے کو کسی دوسری عدالت میں منتقل کرنے کی ان کی درخواست مسترد کردی تھی۔

بعد ازاں 5 اگست کو عمران خان کے وکیل خواجہ حارث نے اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی تھی جس کے ساتھ ڈائری نمبر منسلک تھا۔

سابق وزیراعظم کو توشہ خانہ کیس میں بدعنوانی کا مرتکب پایا گیا تھا اور انہیں تین سال قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس (ر) محمد بشیر بندیال کی سربراہی میں جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی اور جسٹس جمال خان مندوخیل پر مشتمل سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے تحریک انصاف کی درخواست پر سماعت کی۔

آج کی سماعت

سماعت کے آغاز پر عمران خان کے وکیل لطیف کھوسہ نے اپنے دلائل پیش کیے۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال نے ٹرائل کورٹ کے فیصلے پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جج نے جلد بازی میں فیصلہ سنایا۔

کھوسہ نے سپریم کورٹ سے استدعا کی تھی کہ ان کے موکل نے ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف تین اپیلیں دائر کی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ قومی اسمبلی کے 6 ارکان نے چیئرمین پی ٹی آئی کے خلاف ریفرنس اسپیکر کو بھجوایا تھا جس میں ان کی نااہلی کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ اس کے بعد اسپیکر نے الیکشن ایکٹ کی دفعہ 137 کے تحت ریفرنس الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کو بھیج دیا۔

ایڈووکیٹ کھوسہ نے عدالت سے استدعا کی کہ ان کے موکل پر اثاثوں کے غلط اعلان کا الزام ہے۔ جسٹس نقوی کے استفسار پر کھوسہ نے الیکشن ایکٹ 2017 کی دفعہ 137 اور ذیلی دفعہ 4 پڑھ کر سنائی۔

کیا اراکین اسمبلی کو اپنے ساتھی ارکان کے خلاف ریفرنس بھیجنے کا اختیار حاصل ہے؟ جسٹس نقوی نے استفسار کیا۔ کس قانون کے تحت اراکین اسمبلی دوسرے ارکان پارلیمنٹ کے خلاف ریفرنس بھیج سکتے ہیں؟

اس پر کھوسہ نے جواب دیا کہ اراکین اسمبلی کے پاس ریفرنس بھیجنے کا اختیار نہیں، صرف اسپیکر قومی اسمبلی کے پاس ہے۔ انہوں نے عدالت عظمیٰ کو بتایا کہ الیکشن کمیشن مالی گوشوارے جمع کروانے کے بعد 120 دن کے مقررہ وقت میں کسی رکن قومی اسمبلی کے خلاف کارروائی کرسکتا ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کو چیلنج

جسٹس مندوخیل نے ریمارکس دیئے کہ موجودہ کیس یہ نہیں ہے کہ چیئرمین پی ٹی آئی کے خلاف ریفرنس بھیجا جا سکتا تھا یا نہیں۔ آپ نے اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کو چیلنج کیا ہے۔

چیف جسٹس نے وکیل کھوسہ کو بتایا کہ کیس کے دائرہ اختیار کا معاملہ چیلنج کیا گیا ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ آپ خود کہہ رہے ہیں کہ کیس دوسری عدالت میں زیر التوا ہے۔

کھوسہ اور الیکشن کمیشن کے وکیل امجد پرویز کے دلائل سننے کے بعد چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ہم آج توشہ خانہ کیس میں مداخلت نہیں کریں گے اور ہم کل اسلام آباد ہائی کورٹ کی سماعت دیکھیں گے اور سماعت دوبارہ شروع کریں گے۔

اپنی اپیل میں چیئرمین پی ٹی آئی نے سپریم کورٹ سے استدعا کی کہ وہ ہائی کورٹ کے اس حکم کو کالعدم قرار دے جس میں عمران خان کو ایڈیشنل سیشن جج ہمایوں دلاور کی عدالت میں دوبارہ پیش ہونے کی ہدایت کی گئی تھی۔

انہوں نے درخواست کی تھی کہ نئی عرضی پر فیصلہ آنے تک ٹرائل کورٹ کو کارروائی کرنے سے روکا جائے۔

درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ ٹرائل جج نے نامناسب اور عجلت میں توشہ خانہ کیس کو قابل سماعت قرار دیا اور اسلام آباد ہائی کورٹ نے کیس واپس جج دلاور کو بھیج کر قانونی غلطی کی۔

درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے اپنے حالیہ حکم میں درخواست گزار کو ان کے بنیادی حقوق سے محروم کیا ہے، جس جج نے کیس کو قابل سماعت قرار دیا ہے وہ آزادانہ طور پر اس کی سماعت کیسے کر سکتا ہے۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانٹرائل کورٹ نے توشہ خانہ کا فیصلہ جلد بازی میں سنایا، چیف...