30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

حکومت سڑکوں کی بہتر سہولت کے لئے ‘یونیفائیڈ ٹریفک سسٹم’ کا مطالبہ کر رہی ہے

ضرور جانیے

اسلام آباد-وفاقی حکومت ملک بھر میں موٹر سائیکل سواروں کی سہولت اور سڑکوں پر بہتر سیفٹی کی فراہمی کیلئے یونیفائیڈ ٹریفک سسٹم کے حصول کے عمل میں ہے۔

اس سلسلے میں حکومت نے مذکورہ نظام کے اجراء کے لئے ہر صوبے کے متعلقہ محکموں کو تین تجاویز پیش کی ہیں۔ ان تجاویز میں سینٹرلائزڈ ڈرائیونگ لائسنس، کمرشل وہیکل فٹنس اسسمنٹ اور ڈرائیونگ لائسنس اور ٹریفک کے بارے میں ڈیٹا شیئرنگ شامل ہے۔

صوبائی حکام سے کہا گیا ہے کہ وہ تمام تجاویز پر جلد از جلد اپنی رائے فراہم کریں تاکہ مجوزہ نظام کو حقیقت میں بدلنے کے لیے کام کیا جا سکے۔

ٹریفک سسٹم

تفصیلات سے ظاہر ہوتا ہے کہ وفاقی حکام نے بیرونی ممالک کی جانب سے اپنائے جانے والے ٹریفک سسٹم کا مکمل جائزہ لیا اور پھر اس نتیجے پر پہنچے کہ پاکستان میں بھی ایسا ٹریفک سسٹم ہونا چاہیے جو پیچیدگیوں کو دور کرنے، موٹر سائیکل سواروں کو سہولت فراہم کرنے اور سڑک حادثات کو کم کرنے میں مدد دے سکے۔

وفاقی وزارت مواصلات کے فراہم کردہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ سڑک کے صدمے نے قومی معیشت کو نمایاں طور پر متاثر کیا ہے۔

پاکستان میں ٹریفک حادثات کی لاگت جی ڈی پی کا تقریبا 3 فیصد ہے۔ قومی معیشت کا سالانہ خسارہ 9 ارب ڈالر تک بڑھ گیا ہے۔

نیشنل ٹرانسپورٹ پالیسی 2018 میں شہری اور دیہی روڈ سیفٹی چیلنجز کا خاکہ پیش کیا گیا ہے جو آنے والی دہائیوں میں آبادی، گاڑیوں اور مسافروں اور مال بردار نقل و حرکت میں متوقع اضافے کے نتیجے میں ہوں گے۔

ایک عہدیدار نے کہا: “18 ویں ترمیم نے صوبوں کو ذمہ داریوں کی منتقلی کو نافذ کیا۔ روڈ سیفٹی ریگولیشن اور مینجمنٹ کے زیادہ تر شعبوں کے لئے انفرادی صوبائی اور علاقائی حکومتوں کی براہ راست ذمہ داری ہے۔ لہٰذا ہم نے پاکستان میں یونیفائیڈ ٹریفک سسٹم متعارف کرانے کے لیے ان سے رابطہ مانگا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے نمائندوں نے ایک اجلاس منعقد کیا ہے جس میں یونیفائیڈ ٹریفک سسٹم کے معاملے پر تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانحکومت سڑکوں کی بہتر سہولت کے لئے 'یونیفائیڈ ٹریفک سسٹم' کا مطالبہ...