25.9 C
Karachi
Tuesday, February 27, 2024

نبي صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں نذرانہ عقیدت

ضرور جانیے

“”مدینہ کی زیارت“”

چلو چلیں اس دیار میں اب جہاں دلوں کو قرار ھوگا
نبی (صلی اللہ علیہ وسلم )کی چوکھٹ پہ جاکے بیٹھیں وہیں تو روح میں نکھار ھوگا

جہاں کہ صفہ کے شوق والے صحابہ بیٹھے حدیث سیکھیں
نبی (صلی اللہ علیہ وسلم ) کی صحبت سے سیکھنے کا مدرسہ کیا پروقار ھوگا

تھا ان کا ایمان اتنا اونچا نبی کی اک اک ادا پہ قرباں
ذرا جو دیکھا کوئ عمل تو وھی اب ان کا شعار ھوگا

گناہ سے بچ کر چلیں گے ایسے کہ اپنا دامن الجھ نہ جائے
ھے کامیابی یہاں وہاں کی اسی پہ ہی بس مدار ھوگا

مدینہ کی بات ہی نرالی وہاں تو آقا کی برکتیں ھیں
وہاں جو جاکر رھیں گے اک دن وہ دن بھی کتنا بہار ھوگا

محبت اپنے نبی کی دل میں عمل سے تصدیق ھو تو تب ھے
جو سنتوں سے کرے محبت وہ انکا بس جانثار ھوگا

صحابہ کی جو محبتیں ھیں یہ کام آئیں گی واں حشر میں
بتایا قرآن نے کہ اس دن محبتوں کا حصار ھوگا

جہاد اسلام کی ھے شہ رگ تمنی اس کی کرو ھمیشہ
ذرا نہ چھوئے گی آگ اس کو کہ جس پہ اس کا غبار ھوگا

ھماری آنکھیں ھیں کتنی محروم نبی کی پرنور صحبتوں سے
مدینہ جاکے جو روئیں گے تو ضرور ہی انکا دیدار ھوگا

اب اپنے عصیاں سے کرکے توبہ روانہ سنت کا قافلہ ھے
اسی عمل سے ہی امن ھوگا اسی عمل سے سدھار ھوگا

نبی کی نعتیں بیان کرنا بنے نہ لفظوں کی اک کہانی
دلوں کا نالہ بھی ساتھ ھوگا خلوص اپنا شعار ھوگا

مقام دیکھو یہ ھے ادب کا ذرا بھی چوک ھو نہ جائے
کمی پہ اپنی بہانا آنسوں مدینہ میں جب قرار ھوگا

حبیب رب ھیں وہ اتنے اعظم کہ فکر میں بھی نہ ھو احاطہ
شفاعت انکی جبھی ملے گی جو روح میں انکا پیار ھوگا

الہی تیرے حبیب کا وہ مدینہ اب ھے ھماری خواہش
وہیں پہ گزران ھوگی اپنی وہیں پہ اپنا مزار ھوگا

کلام اھلیہ ڈاکٹر عثمان انور

پسندیدہ مضامین

اسلامنبي صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں نذرانہ عقیدت