29.9 C
Karachi
Sunday, May 19, 2024

پی ٹی آئی رہنما شہریار آفریدی اور شاندانا گلزار اسلام آباد ہائی کورٹ کے ایم پی او کے احکامات معطل کرنے کے بعد رہا

ضرور جانیے

اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما شہریار آفریدی اور شاندانا گلزار کی فوری رہائی کا حکم دیتے ہوئے ان کی نظر بندی کے احکامات معطل کردیے ہیں۔

پی ٹی آئی کے دونوں رہنماؤں کو اسلام آباد پولیس نے مینٹیننس آف پبلک آرڈر (ایم پی او) آرڈیننس کے تحت حراست میں لیا تھا، جسے عدالت نے آفریدی اور گلزار کی رہائی کے لیے دائر درخواستوں کی سماعت کے دوران روک دیا تھا۔

دونوں سیاست دانوں کو قانون نافذ کرنے والے اداروں نے 9 مئی کے فسادات میں مبینہ طور پر ملوث ہونے کے الزام میں گرفتار کیا تھا، جو اس سال کے اوائل میں پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان کی گرفتاری کے بعد شروع ہوئے تھے۔

آفریدی کو پہلی بار 16 مئی کو ایم پی او آرڈیننس 1960 کی دفعہ 3 کے تحت اسلام آباد میں ان کی رہائش گاہ سے گرفتار کیا گیا تھا۔ رہائی کے حکم کے باوجود انہیں 30 مئی کو اسی دفعہ کے تحت فوری طور پر دوبارہ گرفتار کر لیا گیا۔

پی ٹی آئی رہنما کو 3 اگست کو لاہور ہائی کورٹ کے راولپنڈی بینچ نے ضمانت دے دی تھی۔ تاہم اڈیالہ جیل سے رہائی کے بعد راولپنڈی پولیس نے انہیں ایک بار پھر حراست میں لے لیا۔

درخواست

ان کی گرفتاری کے جواب میں سابق وزیر کے وکیل نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی تھی جس میں ان کی رہائی اور ایم پی او کا حکم منسوخ کرنے کی استدعا کی گئی تھی۔

گلزار کو مبینہ طور پر 9 اگست کو اسلام آباد پولیس نے اٹھایا تھا جس کے بعد ان کی والدہ نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی تھی۔

آج کی سماعت کے دوران اسلام آباد ہائی کورٹ کی ہدایات میں وفاقی دارالحکومت کے ڈپٹی کمشنر کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی بھی شامل ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس بابر ستار نے شاہد آفریدی سے استفسار کیا کہ کیا ان کا دارالحکومت میں گھر ہے جس پر شاہد آفریدی نے ہاں میں جواب دیا اور انہیں گھر جانے کی اجازت دے دی گئی۔ عدالت نے گلزار کی فوری رہائی کا بھی حکم دیا لیکن اسلام آباد میں ان کی نقل و حرکت پر پابندی عائد کردی۔

عدالت نے کہا کہ اگر گلزار کو کچھ ہوا تو اس کے ذمہ دار آئی جی اسلام آباد اکبر ناصر خان اور چیف کمشنر ہوں گے۔

متعدد الزامات میں پولیس کی تحویل میں موجود آفریدی اپنے وکیل شیر افضل مروت کے ہمراہ قرآن پاک کی کاپی لے کر عدالت میں پیش ہوئے۔

ڈپٹی کمشنر اسلام آباد

جسٹس بابر ستار نے کیس کی سماعت کے دوران ڈپٹی کمشنر اسلام آباد کو روسٹرم پر طلب کرتے ہوئے 9 مئی کے واقعات کی تفصیلات طلب کرلیں۔

انٹیلی جنس رپورٹس کے مطابق ڈی سی کا کہنا تھا کہ سیاستدان نے لوگوں کو مشتعل کیا۔ ڈی سی نے مزید کہا کہ عدلیہ کے خلاف پارٹی کی مہم میں ضلعی عدالتوں پر حملے کی منصوبہ بندی میں آفریدی کے ملوث ہونے کی اطلاعات ہیں۔

جسٹس ستار نے ڈی سی سے استفسار کیا کہ آفریدی نے جیل میں ہونے کے باوجود لوگوں کو کیسے اکسایا۔

ڈی سی نے اپنے جواب میں کہا کہ میری آنکھیں اور کان صرف انٹیلی جنس رپورٹس ہیں۔

عدالت نے ایس ایچ او سے استفسار کیا کہ آفریدی کے حملے کی منصوبہ بندی کے بارے میں ان کے پاس کیا معلومات ہیں تو انہوں نے کہا کہ کوئی اور انچارج ہے۔

جج نے ضلع پولیس افسر سے بھی یہی سوال پوچھا۔ افسر نے کہا، ‘میں اس وقت چھٹی پر تھا۔

اس کے بعد عدالت نے ڈی سی سے پوچھا کہ کیا شوکاز نوٹس کا جواب داخل کیا گیا ہے۔ ”ہاں جناب۔ ایک تحریری جواب داخل کیا گیا ہے، “انہوں نے جواب دیا.

وفاقی دارالحکومت

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جج نے وفاقی دارالحکومت میں 8 مئی کے واقعات کے بارے میں پولیس حکام سے استفسار کیا تو آئی جی اسلام آباد نے کہا کہ واقعے سے قبل خدشات کی بنیاد پر کارروائی کی جاتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے یہ اقدامات امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لئے کئے ہیں۔

جسٹس ستار نے اسپیشل برانچ کی رپورٹ کو مذاق قرار دیتے ہوئے پی ٹی آئی رہنما کی گرفتاری کا نوٹیفکیشن طلب کرلیا۔

سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس کے وکیل طاہر کاظم نے عدالت کو بتایا کہ پہلے ایم پی او احکامات کو منسوخ کرنے کی وجوہات مختلف ہیں۔

ان کے دلائل کا جواب دیتے ہوئے عدالت نے کہا کہ گرفتاری کے بعد حراست کے احکامات جاری کیے گئے تھے۔ اس میں مزید کہا گیا ہے کہ تھریٹ الرٹس پر کارروائی اندیشے پر مبنی ہے۔

جسٹس فاروق ستار نے تھری ایم پی او کے حکم کی روشنی میں آفریدی کی بار بار گرفتاریوں پر بھی برہمی کا اظہار کیا اور اسے کالعدم قرار دیا۔

انہوں نے ایس ایس پی آپریشنز کے جواب کو غیر تسلی بخش قرار دیتے ہوئے ان پر بھی فرد جرم عائد کرنے کا حکم دیا اور ڈی سی کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کا بھی حکم دیا۔

جسٹس ستار نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ ڈپٹی کمشنر اسلام آباد کے خلاف فرد جرم عائد کی جائے گی۔

بعد ازاں عدالت نے جیل سپرنٹنڈنٹ سے اڈیالہ جیل میں قید آفریدی کی ملاقاتوں کے بارے میں پوچھا۔

عدالت نے کیس کی مزید سماعت 2 ہفتوں کے لیے ملتوی کردی۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانپی ٹی آئی رہنما شہریار آفریدی اور شاندانا گلزار اسلام آباد ہائی...