30.9 C
Karachi
Tuesday, April 23, 2024

پی ٹی آئی نے راجہ ریاض، نور عالم سمیت 11 افراد کو پارٹی سے نکال دیا

ضرور جانیے

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے سابق حکمران جماعت کے نظم و ضبط اور پالیسیوں کی خلاف ورزی کرنے پر اپنے مزید 13 رہنماؤں کی بنیادی رکنیت ختم کر دی ہے۔

پارٹی سے نکالے جانے والوں میں قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف راجہ ریاض، چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نور عالم خان، رکن قومی اسمبلی نزہت پٹھان، رکن قومی اسمبلی رمیش کمار وانکوانی اور رکن قومی اسمبلی وجیہہ قمر شامل ہیں۔

پی ٹی آئی کے ناراض اراکین اسمبلی رانا محمد قاسم نون، سردار ریاض محمود خان مزاری، نواب شیر، مخدوم زادہ سید باسط احمد سلطان، افضل خان ڈھنڈلا، عبدالغفار وٹو، عامر طلال گوپانگ اور احمد حسین دلبر حسین کو بھی پارٹی سے نکال دیا گیا۔

رہنماؤں کو ہدایت کی گئی کہ وہ کسی بھی طرح سے پارٹی کے نام یا عہدے کا استعمال نہ کریں۔

خیبر پختونخوا

اس کے علاوہ پی ٹی آئی کے سیکرٹری جنرل نے خیبر پختونخوا سے تعلق رکھنے والے سابق ایم پی اے ملک شوکت کو سابق حکمران جماعت کی منظوری کے بغیر نو تشکیل شدہ پارٹی کے اجلاس میں شرکت کرنے پر شوکاز نوٹس جاری کیے۔ انہیں دو دن کے اندر اپنا جواب جمع کرانے کے لئے کہا گیا تھا۔

گزشتہ ہفتے پی ٹی آئی نے کے پی کے سابق وزیراعلیٰ محمود خان کو بھی پارٹی سے نکال دیا تھا کیونکہ انہوں نے پارٹی کے سابق رہنما پرویز خٹک کی قیادت والے دھڑے پی ٹی آئی پارلیمنٹیرینز میں شمولیت اختیار کی تھی۔

پی ٹی آئی کے سابق اراکین اسمبلی ولسن وازیر، اشتیاق ارمر، اقبال وزیر، یعقوب شیخ اور شفیق آفریدی کو بھی پارٹی سے نکال دیا گیا ہے۔

سابق وزیر اعظم عمران خان کے سابق قریبی ساتھی پرویز خٹک نے گزشتہ ماہ پارٹی سے نکالے جانے کے چند دن بعد پی ٹی آئی پارلیمنٹیرینز تشکیل دی تھی۔

نئی پارٹی کے قیام کا اعلان کرتے ہوئے سابق وزیر دفاع نے 9 مئی کے حملوں اور پرتشدد مظاہروں کی مذمت کی۔

انہوں نے کہا کہ ہمارا وجود براہ راست پاکستان سے جڑا ہوا ہے۔ صوبے کی سیاست میں اہم مقام رکھنے والے سابق صوبائی وزیر اعلیٰ نے کہا کہ خیبر پختونخوا میں پی ٹی آئی اب مکمل طور پر ختم ہو چکی ہے۔

پی ٹی آئی حکومت کے دوران پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل اور کے پی کے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے خدمات انجام دینے والے سیاست دان کو ‘شوکاز نوٹس’ کا جواب نہ دینے پر برطرف کر دیا گیا تھا۔

مشکلات

پی ٹی آئی اب بھی مشکلات کا شکار ہے، اس کے چیئرمین کو متعدد مقدمات اور نااہلی کے خطرے کا سامنا ہے جبکہ پارٹی کے اہم رہنماؤں نے 9 مئی کے بعد اپنی راہیں جدا کر لی ہیں ۔

پارٹی کے کچھ سابق ارکان، جو پہلے پی ٹی آئی کے سربراہ کے قریبی سمجھے جاتے تھے، نے بھی پنجاب میں عمران خان کی پارٹی کو نقصان پہنچایا کیونکہ جہانگیر ترین، علیم خان اور دیگر افراد نے جون میں تحریک پاکستان پارٹی تشکیل دی تھی۔

پسندیدہ مضامین

سیاستپی ٹی آئی نے راجہ ریاض، نور عالم سمیت 11 افراد کو...