30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

پی آر کی تحقیقاتی ٹیم پٹری سے اترنے کی ‘بنیادی وجہ’ پر اتفاق رائے تک پہنچنے میں ناکام

ضرور جانیے

نواب شاہ کے قریب ہزارہ ایکسپریس حادثے کی محکمانہ تحقیقات کی ابتدائی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اس المناک واقعے کی بنیادی وجوہات میں فش پلیٹیں غائب ہونا، پٹری وں کا ٹوٹنا اور تخریب کاری کی کوششیں ہیں۔

نواب شاہ کے قریب ہزارہ ایکسپریس حادثے میں کم از کم 30 افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے تھے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ‘تمام پہلوؤں سے جانچ پڑتال کے بعد ہم اس نتیجے پر پہنچے کہ حادثہ ریلوے ٹریک ٹوٹنے اور مچھلی کی پلیٹوں کے غائب ہونے کی وجہ سے ہوا۔’

پاکستان ریلویز کی چھ رکنی تحقیقاتی ٹیم نے ٹرین کے انجن کے پھسلنے کو بھی پٹری سے اترنے کی ایک اور وجہ قرار دیا ہے۔

ٹرین کا انجن

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ٹرین کا انجن سینئر ماتحتوں کی جانچ پڑتال کے بغیر جائے وقوعہ سے چلا گیا تھا۔ مزید برآں، حادثے کے مقام سے آگے لوہے کی مچھلی کی پلیٹوں اور لکڑی کے ٹرمینل پر “چھوٹے ٹکرانے کے نشانات” پائے گئے۔ اس لئے انجینئرنگ برانچ اور مکینیکل برانچ کو اس حادثے کا ذمہ دار ٹھہرایا جاتا ہے۔

دستاویز میں کہا گیا ہے کہ تخریب کاری کو مسترد نہیں کیا جاسکتا کیونکہ پٹری سے اترنے والی بوگیوں کو 750 فٹ کی دوری تک گھسیٹا گیا تھا۔

ٹیم کے دو ممبروں نے اختلافی نوٹ دیئے۔ انہوں نے کہا، ‘پٹری سے اترنے کا واقعہ دو فش پلیٹوں کے غائب ہونے، ٹوٹی ہوئی ریل اور انجن پٹری سے اترنے کی وجہ سے ہوا۔ نتیجتا وہیل ڈسک کے باہر چراگاہوں کے نشانات بھی نظر آئے۔ اس کے علاوہ ٹریک، فش پلیٹس اور بولٹ پر بھی گرمی کے کوئی نشان نہیں دیکھے گئے۔

ایک دوسرے عہدیدار کے مطابق ٹرین کے پٹری سے اترنے کی اصل وجہ انجن کا ایکسل جام ہونا تھا جس کے نتیجے میں مچھلیوں کی پلیٹوں پر گہرے جھٹکے لگے تھے۔ عہدیدار کے نوٹ میں کہا گیا ہے کہ ‘مسلسل جامنگ کے ساتھ اس گہرائی میں اضافہ ہوا، جس کے نتیجے میں گمشدہ مچھلی وں کی پلیٹوں کے لیے فش بولٹ ٹوٹ گئے۔’

پی آر حکام کا خیال تھا کہ یہ ‘بہت ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ’ ہے کیونکہ حتمی رپورٹ کی تیاری میں کچھ وقت لگے گا۔

انہوں نے کہا، “اس سلسلے میں ایک تفصیلی تحقیقات جاری ہیں کیونکہ وفاقی حکومت کے انسپکٹر آف ریلوے (گریڈ 22 کے افسر) اس سانحے کی وجہ معلوم کرنے کے لئے موقع پر موجود ہیں۔

اپ اور ڈاؤن دونوں پٹریوں پر ریل ٹریفک بحال

پاکستان ریلویز نے ٹریک کی مرمت اور بحالی کے بعد اپ اور ڈاؤن ٹریک پر ریل ٹریفک بحال کردی ہے۔

ڈاؤن ٹریک

حادثے کے بعد تقریبا 18 گھنٹے بعد ڈاؤن ٹریک کو بحال کیا گیا اور ٹرینوں کی روانگی بھی شروع کردی گئی لیکن اپ ٹریک کی بحالی کا کام اب بھی جاری ہے۔

انسپکٹر ریلوے علی محمد آفریدی نے بتایا کہ ہزارہ ایکسپریس ٹرین حادثے میں اپ ٹریک 300 سے 400 فٹ تک متاثر ہوا تھا تاہم اب ٹریک کی بحالی کا کام مکمل کرلیا گیا ہے جس کے بعد دونوں ٹریک بحال کردیے گئے ہیں۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانپی آر کی تحقیقاتی ٹیم پٹری سے اترنے کی 'بنیادی وجہ' پر...