29.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

پاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں جی 20 سربراہ اجلاس میں شرکت نہ کرنے پر چین، سعودی عرب اور ترکی کی تعریف کی

ضرور جانیے

وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں جی 20 سیاحتی اجلاس میں شرکت نہ کرنے پر چین، سعودی عرب اور ترکی سمیت دیگر ممالک کی تعریف کی ہے۔

انہوں نے آزاد جموں و کشمیر کے علاقے باغ میں ایک عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں چین، سعودی عرب، ترکی اور دیگر ممالک کو سلام پیش کرتا ہوں جنہوں نے غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر کے علاقے میں جی 20 سیاحتی اجلاس میں شرکت کی بھارتی دعوت کو مسترد کردیا۔ جب نئی دہلی نے اپنے واحد مسلم اکثریتی علاقے کی نیم خود مختار حیثیت کو ختم کر دیا اور سخت حفاظتی لاک ڈاؤن نافذ کر دیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ کانفرنس میں شرکت کرنے والے ممالک نے بھی اپنی شرکت کم کر دی ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ کانفرنس میں کچھ بھی نارمل نہیں ہے۔

انہوں نے سوال اٹھایا کہ ایسے علاقے میں سیاحت کو کیسے فروغ دیا جا سکتا ہے جہاں مقامی آبادی کا نصف حصہ جیلوں میں ہے اور حق خودارادیت کا مطالبہ کرنے والے مقامی لوگوں کی آواز وں کو دبانے کے لئے 900،000 سے زیادہ مسلح اہلکار تعینات ہیں۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ نریندر مودی کی زیر قیادت حکومت دراصل ہندوستان میں دہشت گرد تنظیموں کی ایک بڑی حامی ہے جو “مسلمانوں اور عیسائیوں سمیت ہندوستانی اقلیتوں کے خلاف دہشت گردی کی سرگرمیوں میں ملوث ہیں”۔

بھارتی حکومت

انہوں نے کہا کہ جب ہم کشمیریوں کے انسانی حقوق کی بات کرتے ہیں تو وہ (بھارتی حکومت) کہتے ہیں کہ ہم دہشت گردوں کی نمائندگی کر رہے ہیں، جب کہ ہم بھی دہشت گردی کا شکار ہو چکے ہیں تو وہ ہمیں دہشت گرد کیسے کہہ سکتے ہیں۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہم امن چاہتے ہیں اور دہشت گردی سے متاثرہ لوگوں کی نمائندگی کرتے ہیں۔

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کا حوالہ دیتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جب انہوں نے قصائی، قصائی یا قاتل کہا تو وہ رونے لگے۔

انہوں نے سوال اٹھایا کہ کیا اصل دہشت گرد وہ ہیں جنہوں نے کسی ملک کے وزیر خارجہ کے لیے رقم رکھی تھی یا وہ جو خود دہشت گردی کا شکار تھے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ جب بھی وہ غیر ملکی شخصیات سے ملتے ہیں تو انہوں نے ہمیشہ کشمیریوں کے حق میں آواز اٹھائی ہے۔

بلاول نے کہا کہ جب وہ وزیر خارجہ ہیں تو کسی سیاسی جماعت کی نہیں بلکہ ہر پاکستانی شہری کی نمائندگی کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جب کشمیر کاز ہوتا ہے تو ہم تمام سیاسی اختلافات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اس مسئلے پر ہمیشہ متحد رہتے ہیں۔

کشمیری عوام

مسئلہ کشمیر پاکستان اور بھارت کا مسئلہ نہیں تھا بلکہ یہ کشمیری عوام کا مسئلہ ہے اور یہ ایک بین الاقوامی مسئلہ بن چکا ہے جو اس وقت تک حل نہیں ہوسکتا جب تک کشمیریوں کو ان کا حق خودارادیت استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی جاتی۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ کشمیریوں کی جدوجہد رنگ لائے گی اور وہ دن دور نہیں جب کشمیری اپنا حق خودارادیت استعمال کرکے آزادی حاصل کریں گے۔

چین، جو بھارتی ریاست اروناچل پردیش کو مکمل طور پر تبت کا حصہ قرار دیتا ہے، اس علاقے میں سیاحت کو فروغ دینے کے لیے ہونے والے اجلاس کی مذمت میں پاکستان کے ساتھ کھڑا ہے جو اپنی جھیلوں، گھاس کے میدانوں اور برف سے ڈھکے پہاڑوں کے لیے مشہور ہے۔

اطلاعات کے مطابق مسلم ممالک سعودی عرب اور ترکی سرکاری نمائندگی نہیں بھیج رہے ہیں جبکہ کچھ مغربی ممالک نے اپنی موجودگی میں کمی کی ہے۔

بھارت بین الاقوامی برادری کو سرینگر میں ڈل جھیل کے کنارے واقع ایک وسیع و عریض اور محفوظ مقام پر مدعو کرکے تشدد سے متاثرہ خطے میں ‘معمول اور امن’ کی تصویر پیش کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

گزشتہ ایک ہفتے کے دوران مقبوضہ کشمیر کے رہائشیوں نے سخت حفاظتی اقدامات کیے ہیں۔ سیکڑوں افراد کو تھانوں میں حراست میں لیا گیا ہے اور دکانداروں سمیت ہزاروں افراد کو حکام کی جانب سے کالز موصول ہوئی ہیں جن میں انہیں ‘احتجاج یا پریشانی کے کسی بھی اشارے’ کے خلاف متنبہ کیا گیا ہے۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانپاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں جی 20 سربراہ اجلاس میں شرکت نہ...