30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

پاکستان کو اہم بجٹ منظور کرنے سے قبل آئی ایم ایف بورڈ کے آخری جائزے کا سامنا

ضرور جانیے

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے موجودہ بیل آؤٹ پیکج کے تحت پاکستان 9 جون کو بجٹ پیش کرنے سے قبل صرف ایک بورڈ کا جائزہ لے سکتا ہے، جو اپنے آپ میں ایک کامیاب جائزے کی جانب ایک قدم ہے۔

پاکستان کے لیے اس کثیر الجہتی قرض دہندہ کے ریزیڈنٹ نمائندے ایستھر پیریز روئز نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ ‘موجودہ ای ایف ایف کے تحت حتمی جائزے کی راہ ہموار کرنے کے لیے ضروری ہے کہ زرمبادلہ مارکیٹ کے مناسب کام کاج کو بحال کیا جائے۔’

انہوں نے مزید کہا کہ دیگر عوامل میں مالی سال 2023-24 کے لئے ایک بجٹ منظور کرنا جو پروگرام کے مقاصد کو پورا کرتا ہے، اور بورڈ کے جائزے سے پہلے 6 ارب ڈالر کے فرق کو ختم کرنے کے لئے مضبوط اور قابل اعتماد فنانسنگ وعدوں کو حاصل کرنا شامل ہے۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ مخلوط حکومت واشنگٹن میں قائم قرض دہندہ کو مطمئن کرنے کے لیے اصلاحات اور کل اعلان ہونے والے بجٹ میں رائے دہندگان کا دل جیتنے کے اقدامات کے درمیان توازن تلاش کرنے کی امید کر رہی ہے۔

ریکارڈ افراط زر

پاکستان کا آئی ایم ایف پروگرام رواں ماہ ختم ہو چکا ہے اور اس کے لیے 2.5 ارب ڈالر کے فنڈز ابھی جاری نہیں کیے گئے ہیں کیونکہ وہ ریکارڈ افراط زر، مالی عدم توازن اور کم ذخائر سے دوچار ہے۔

نومبر میں عام انتخابات ہونے والے ہیں، جس سے حکومت کو امید ہے کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین کی جانب سے گزشتہ سال عدم اعتماد کے ووٹ سے ہٹائے جانے کے بعد سے جاری احتجاجی مہم سے پیدا ہونے والی افراتفری ختم ہو جائے گی۔

سابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ حکومت کے لیے آئی ایم ایف کی فنڈنگ حاصل کرنا ضروری ہے اس لیے توسیع ی بجٹ کا امکان بہت کم ہے۔

مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف کے بغیر پاکستان کے لیے آئندہ مالی سال کا زندہ رہنا بہت مشکل ہوگا لہٰذا مجھے یقین ہے کہ حکومت ایسا بجٹ لائے گی جو کم و بیش آئی ایم ایف کے نسخوں کے مطابق ہو۔

آئی ایم ایف کی جانب سے 6.5 ارب ڈالر کے پیکج میں سے 1.1 ارب ڈالر جاری کرنے کا معاہدہ نومبر سے تاخیر کا شکار ہے۔

پاکستان کو آئندہ مالی سال

ادائیگیوں کے توازن کے بحران سے بچنے کے لیے یہ فنڈز پاکستان کے لیے انتہائی اہم ہیں اور بیشتر تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ موجودہ پروگرام کی میعاد ختم ہونے کے بعد بھی پاکستان کو آئندہ مالی سال میں بیل آؤٹ حاصل کرنا پڑے گا تاکہ قرضوں کی ادائیگی میں ناکامی سے بچا جا سکے۔

مرکزی بینک کے ذخائر تقریبا ایک ماہ تک درآمدات کا احاطہ کرسکتے ہیں۔

مئی میں 22 کروڑ آبادی والے ملک میں افراط زر کی شرح 37.97 فیصد تک پہنچ گئی جو مسلسل دوسرے ماہ ریکارڈ ہے اور جنوبی ایشیا میں بلند ترین شرح ہے۔

منگل کو وزیر منصوبہ بندی نے اعلان کیا کہ نئے مالی سال میں ترقیاتی اخراجات کا بجٹ ہدف 1,150 ارب روپے (4.02 ارب ڈالر) ہوگا جبکہ سال کے لیے افراط زر کا تخمینہ 21 فیصد لگایا گیا ہے۔

عام انتخابات کے پیش نظر بعض تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ حکومت جمعے کے روز ووٹ حاصل کرنے کے اقدامات کا اعلان کرے گی، بھلے ہی ان وعدوں کو بعد میں واپس لینا پڑے۔

کراچی میں قائم بروکریج اسماعیل اقبال سیکیورٹیز کے ریسرچ ہیڈ فہد رؤف نے کہا کہ انہیں توقع ہے کہ سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ ہوگا اور زراعت کے شعبے کے لیے پیکج آئے گا، جس میں پہلے سے ہی محدود ٹیکس بیس پر زیادہ بوجھ ڈالا جائے گا اور اسے وسعت دینے کے لیے بہت کم بامعنی اقدامات کیے جائیں گے۔

سپر ٹیکس

رؤف نے مزید کہا کہ “بینکوں اور ٹیکس زدہ صنعتوں کو گرمی کا احساس ہوتا رہے گا،” انہوں نے مزید کہا کہ ان کے خیال میں 15 سے زائد شعبوں پر 10 فیصد کا نام نہاد سپر ٹیکس دوبارہ لگایا جائے گا، حالانکہ حکومت نے گزشتہ سال کہا تھا کہ یہ ایک بار کی ادائیگی ہے۔

ایک سال قبل حکومت نے مالی سال 2022-23 کے لیے مجموعی اخراجات کا ہدف 9.5 ٹریلین روپے مقرر کیا تھا جو آئی ایم ایف کی عدم اطمینان کے بعد 8.49 ٹریلین روپے تھا۔

رؤف نے کہا کہ انہیں توقع ہے کہ اس سال بھی ایسا ہی ہوگا۔

آزاد ماہر اقتصادیات ثاقب شیرانی کا کہنا ہے کہ ان کا بھی ماننا ہے کہ بجٹ انتخابات سے قبل عوامیت پسند اقدامات سے بھرپور ہوگا جو آئی ایم ایف کی مزید حمایت کی ضرورت کے پیش نظر جولائی سے ستمبر کی سہ ماہی میں زندہ رہنے کے امکانات نہیں ہوں گے۔

پسندیدہ مضامین

کاروبارپاکستان کو اہم بجٹ منظور کرنے سے قبل آئی ایم ایف بورڈ...