24.9 C
Karachi
Monday, March 4, 2024

نواز شریف سیاسی انتقام کا شکار ہیں: عدالت

ضرور جانیے

لاہور: سابق وزیراعظم نواز شریف کو سابق حکومت کے کہنے پر ریفرنس کے ذریعے سیاسی طور پر نشانہ بنایا گیا اور انہیں اشتہاری قرار دینے کے لیے مناسب قانونی طریقہ کار پر عمل نہیں کیا گیا۔

یہ اعلان احتساب عدالت نے 37 سال پرانے نجی جائیداد کیس میں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سربراہ کی بریت سے متعلق اپنے تفصیلی فیصلے میں کیا۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ شاید قومی احتساب بیورو (نیب) کے حکام اس وقت کے حکمران جنتا کے کہنے پر ریفرنس تیار کرنے پر مجبور تھے تاکہ ملزم کے سیاسی کیریئر اور خیرسگالی کو نقصان پہنچایا جا سکے جو تین مرتبہ پاکستان میں تین بار منتخب وزیر اعظم کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکے ہیں۔

عدالت نے نیب اور ریونیو بورڈ کو نواز شریف اور 27 شیئر ہولڈرز کی جائیدادیں منجمد کرنے کا بھی حکم دیا۔

تفصیلی فیصلہ

عدالت نے 24 جون کو اس کیس میں نواز شریف کو بری کر دیا تھا اور تفصیلی فیصلہ جمعرات کو جاری کیا گیا تھا۔

فیصلے میں کہا گیا کہ سابق وزیراعظم کو اشتہاری قرار دینے کے لیے قانونی طریقہ کار پر عمل نہیں کیا گیا۔

عدالت نے کہا کہ اگر لازمی شرائط پوری نہیں کی گئیں تو ملزم کو اشتہاری قرار دینے کی پوری کارروائی غیر قانونی اور غیر قانونی ہو جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ ریکارڈ سے ظاہر ہوتا ہے کہ ملزم میاں محمد نواز شریف سیاسی انتقام کا نشانہ بن چکے تھے اور شاید نیب حکام اس وقت کی حکمران جنتا کی ایماء پر ریفرنس تیار کرنے پر مجبور تھے تاکہ ملزم کے سیاسی کیریئر اور خیرسگالی کو نقصان پہنچایا جا سکے جو تین بار پاکستان کے منتخب وزیر اعظم رہ چکے ہیں۔ ” فیصلہ ختم ہوا۔

دوسری جانب وزیراعظم شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ملک کے موجودہ بحران وں سے نمٹنے کے لیے سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف کے خلاف کیے گئے اقدامات کو درست کرنا ضروری ہے۔

جمعرات کو اپنے آفیشل ٹوئٹر ہینڈل پر ایک تفصیلی بیان میں انہوں نے کہا کہ وہ پہلے دن سے جانتے ہیں کہ معزول وزیر اعظم نواز شریف کو پاناما پیپرز اسکینڈل میں پھنسایا گیا تھا جس کا مقصد انہیں سیاست سے بے دخل کرنا اور ان کی حکومت کا تختہ الٹنا تھا۔

حالیہ انکشافات

وزیراعظم عمران خان نے یہ بات پی ٹی آئی کے سینئر وکیل حامد خان کے حالیہ انکشافات کا حوالہ دیتے ہوئے کہی جس میں انہوں نے دعویٰ کیا تھا کہ نواز شریف کو نااہل قرار دینے کا فیصلہ پہلے ہی کہیں اور کیا گیا تھا جبکہ اس حوالے سے سپریم کورٹ کے فیصلے کو قانونی تحفظ فراہم کرنے کے لیے استعمال کیا گیا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں شہباز شریف نے کہا کہ پی ٹی آئی کے سینئر وکیل اور صحافی کی جانب سے حالیہ انکشافات کہ کس طرح نواز شریف کو جان بوجھ کر پاناما پیپرز میں پھنسایا گیا جس کا مقصد انہیں حکومت سے بے دخل کرنا اور انہیں سیاست سے روکنا تھا، یہ ہم پہلے دن سے جانتے ہیں۔

تاہم وزیراعظم نے کہا کہ نواز شریف کی نااہلی سے متعلق انکشافات آج بھی بہت اہم ہیں کیونکہ سچائی آہستہ آہستہ سامنے آ رہی ہے۔

پسندیدہ مضامین

سیاستنواز شریف سیاسی انتقام کا شکار ہیں: عدالت