30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

نیب نے توشہ خانہ کیس میں چیئرمین پی ٹی آئی کو دوبارہ طلب کرلیا

ضرور جانیے

قومی احتساب بیورو (نیب) نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کو ایک بار پھر طلب کرلیا ہے کیونکہ وہ جمعہ کو راولپنڈی آفس میں پیش نہیں ہوئے تھے۔قومی احتساب بیورو (نیب) نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کو ایک بار پھر طلب کرلیا ہے کیونکہ وہ جمعہ کو راولپنڈی آفس میں پیش نہیں ہوئے تھے۔

سابق وزیر اعظم، جنہیں گزشتہ سال اپریل میں پارلیمنٹ نے ووٹ دیا تھا، کو ابتدائی طور پر جمعہ کو توشہ خانہ کیس کی تحقیقات کے لئے طلب کیا گیا تھا۔ اس کے باوجود ان کے بجائے ان کے وکیل آئے اور نئی تاریخ کی درخواست جمع کرائی۔

پی ٹی آئی سربراہ کو 19 جون کو طلب کرنے کی درخواست کی گئی تھی لیکن نیب نے سرکاری گفٹ ڈپازٹری سے متعلق کرپشن کیس میں پیشی کی نئی تاریخ 21 جون مقرر کی تھی۔

اس مقدمے میں اختیارات کے غلط استعمال، اعتماد کی مجرمانہ خلاف ورزی اور سرکاری عہدوں پر فائز افراد اور دیگر کی جانب سے ریاستی اثاثوں کے غلط استعمال کے الزامات شامل ہیں۔

تازہ سمن میں سابق وزیر اعظم سے کہا گیا ہے کہ وہ متعلقہ ریکارڈ پیش کریں، جس میں وصول شدہ ریاستی تحائف کی تفصیلات اور ریکارڈ، فروخت شدہ ریاستی تحائف کا ریکارڈ شامل ہے اور ان سرکاری تحائف کو جسمانی طور پر پیش کریں، تاکہ کال اپ نوٹس میں پہلے فراہم کردہ فہرست کے مطابق ماہرین ان کی قیمت کا جائزہ لے سکیں۔

سرکاری اثاثے

دستاویز میں کہا گیا ہے کہ انکوائری میں انکشاف ہوا ہے کہ بطور وزیراعظم آپ کے دور میں آپ کو 108 تحفے میں دیے گئے سرکاری اثاثے پیش کیے گئے جن میں سے 58 تحفے آپ کے پاس تھے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ سابق وزیراعظم قواعد کے برعکس مناسب قیمت کے جائزے کے لیے تحفے میں دیے گئے سرکاری اثاثے توشہ خانہ میں جمع کرانے میں ناکام رہے۔

یہ الزام لگایا گیا تھا کہ اس کے بعد انہوں نے لاکھوں روپے مالیت کے تحفے میں دیئے گئے اثاثوں کو اپنے پاس رکھ کر اپنے عہدے کا غلط استعمال کیا۔

کال اپ نوٹس کے مطابق پی ٹی آئی کے سربراہ نے بطور وزیر اعظم حکومت اور نجی تشخیص کاروں کی جانب سے قیمتوں کی جانچ پڑتال کے عمل کو متاثر کیا۔

نیب ٹیم

انہوں نے کہا کہ 16 جون 2023 کو نیب ٹیم کے سامنے پیش ہونے کے لیے کہا گیا تھا لیکن آپ مقررہ تاریخ پر پیش نہیں ہوئے۔ اس کے بجائے، آپ نے ایک جواب کے ذریعے مطلع کیا، جس میں درخواست کی گئی کہ پیشی کی تاریخ 16 جون، 2023 سے بڑھا کر 19 جون، 2023 کردی جائے۔

آپ کو ایک بار پھر 21 جون 2023 کو صبح 11 بجے نیب راولپنڈی کی ٹیم کے سامنے بطور ملزم پیش ہونے کے لیے بلایا گیا ہے۔

یہ قانون نیب کو پابند کرتا ہے کہ وہ جس کو بھی طلب کر رہا ہو اسے یہ بتائے کہ آیا انہیں بیان ریکارڈ کرانے کے لیے ملزم یا گواہ کے طور پر طلب کیا جا رہا ہے۔

واضح رہے کہ تحریک انصاف کے سربراہ مسلسل نیب کے سامنے پیش نہیں ہو رہے ہیں، خاص طور پر توشہ خانہ کیس میں کیونکہ وہ گزشتہ تین سمنز پر بھی پیش نہیں ہوئے تھے۔

نیب نے گزشتہ سال نومبر میں سابق وزیراعظم، ان کی اہلیہ اور کابینہ کے دیگر ارکان کو ملنے والے تحائف کی اصل قیمت ظاہر نہ کرنے پر نوٹس لیا تھا۔

اس معاملے سے باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعظم کو ملنے والے تحائف کی اصل قیمت اور فروخت میں فرق ہے۔

کرکٹر سے سیاست داں بننے والے عمران خان نے وزیر اعظم کی حیثیت سے یہ تحفے کم قیمت پر خریدے تھے اور پھر انہیں لاکھوں روپے میں فروخت کیا تھا۔

بشریٰ بی بی 190 ملین پاؤنڈ اسکینڈل کیس میں طلب

دریں اثناء نیب نے بشریٰ بی بی کو 190 ملین پاؤنڈ ز کے نیشنل کرائم ایجنسی (این سی اے) برطانیہ تصفیے کیس میں بطور گواہ 22 جون کو طلب کر لیا ہے۔

بشریٰ بی بی کو القادر یونیورسٹی ٹرسٹ کی ٹرسٹی کے طور پر طلب کیا جا رہا ہے۔

علاوہ ازیں نیب نے وزیراعظم کے سابق سیکریٹری اعظم خان کو ذاتی فائدے کے لیے 19 0 ملین پاؤنڈ کی غیر قانونی منتقلی کے حوالے سے بھی 19 جون کو طلب کیا ہے۔

اس مقدمے میں پی ٹی آئی چیئرمین اور دیگر کے خلاف 190 ملین پاؤنڈ کی غیر قانونی منتقلی میں مدد اور معاونت کرنے کے الزامات شامل ہیں۔

ابتدائی طور پر بشریٰ بی بی کو 13 جون کو طلب کیا گیا تھا لیکن وہ پیش نہیں ہوئیں۔

پسندیدہ مضامین

پاکستاننیب نے توشہ خانہ کیس میں چیئرمین پی ٹی آئی کو دوبارہ...