23.9 C
Karachi
Tuesday, February 27, 2024

نگراں سیٹ اپ پر مسلم لیگ (ن) نے اتحادیوں سے مذاکرات کیلئے کمیٹی تشکیل دے دی

ضرور جانیے

اسلام آباد-وزیراعظم شہباز شریف نے نگراں وزیراعظم کے انتخاب اور قومی اسمبلی تحلیل کرنے کے معاملے پر مشاورت کیلئے مسلم لیگ (ن) کی 5 رکنی کمیٹی تشکیل دے دی۔

اگرچہ سندھ اور بلوچستان کی صوبائی اسمبلیاں بھی اگلے ماہ قومی اسمبلی کے ساتھ تحلیل ہو جائیں گی لیکن اس پینل میں پنجاب سے باہر کا کوئی رکن نہیں ہے۔

وفاقی وزراء اسحاق ڈار، احسن اقبال، خواجہ سعد رفیق، سردار ایاز صادق اور خواجہ محمد آصف پر مشتمل کمیٹی کو موجودہ حکومت کی تشکیل کرنے والی سیاسی جماعتوں اور گروہوں سے مشاورت کا ٹاسک دیا گیا ہے۔

کمیٹی کی تشکیل کے ساتھ ہی ملک میں انتظامیہ کے فوری مستقبل کے سیٹ اپ کے لئے مشاورت کا عمل زور پکڑ گیا ہے۔

پارٹی صدر شہباز شریف

مسلم لیگ (ن) کے ذرائع کا کہنا ہے کہ کمیٹی مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف کو متعلقہ پیش رفت سے متعلق رپورٹ پیش کرے گی اور پارٹی صدر شہباز شریف کے علاوہ حساس معاملات پر ان سے رہنمائی حاصل کرے گی۔

کمیٹی فوری طور پر اپنا کام شروع کرے گی۔ خیال کیا جاتا ہے کہ یہ اقدام اسمبلیوں کی تحلیل اور نگراں وزیر اعظم کی تقرری کے سوال پر وزیر اعظم کو دباؤ سے کم کرنے کے لئے کیا گیا ہے۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے دیگر جماعتوں کو بھی مشورہ دیا ہے کہ وہ وسیع مشاورت کے لئے ایسی کمیٹیاں تشکیل دیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ حکمران اتحاد کی ایک بڑی جماعت اپنی پسند کا نگراں وزیراعظم لانے پر زور دے رہی ہے۔

آئینی شقوں کے مطابق وزیر اعظم کو قائد ایوان اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف کی حیثیت سے مشاورت کا آغاز کرنا تھا۔ ان کی ناکامی اس معاملے کو پارلیمانی کمیٹی کو بھیج سکتی ہے، جسے اسپیکر قومی اسمبلی کی جانب سے تشکیل دیا جانا ہے۔

دریں اثنا اگر پارلیمانی کمیٹی بھی نگراں وزیراعظم کے انتخاب میں ناکام رہتی ہے تو الیکشن کمیشن آف پاکستان نگران وزیراعظم کے انتخاب کا حتمی اختیار ہوگا۔

آئندہ انتخابات

دلچسپ بات یہ ہے کہ پارلیمنٹ سے باہر موجود سیاسی جماعتوں اور گروپوں کو حکومت کی جانب سے اس طرح کے کسی بھی غور و خوض کے لئے اعتماد میں نہیں لیا گیا ہے۔ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے گزشتہ روز زور دیا تھا کہ ان کی جماعت کو بھی آئندہ انتخابات اور متعلقہ انتظامات کے حوالے سے آگاہ کیا جائے اور دعویٰ کیا کہ وہ ایک بڑا اسٹیک ہولڈر ہے لیکن حکومت نے ان کی درخواست کو نظر انداز کردیا۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف راجہ ریاض احمد نے نگران وزیراعظم کے انتخاب کے لیے ابتدائی مشاورت کے لیے یکم اگست کو وزیراعظم سے ملاقات کا منصوبہ بنایا تھا۔

وہ جمعہ کو اسلام آباد سے فیصل آباد کے لیے روانہ ہوئے اور پیر کو واپس آئیں گے اور اس مقصد کے لیے کمیٹی تشکیل دینے کے لیے ایوان زیریں میں اپنے ساتھیوں سے بھی مشاورت کریں گے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ریاض سابق اسپیکر قومی اسمبلی ڈاکٹر فہمیدہ مرزا سے مشاورت کے لیے بات کرنا چاہتے ہیں لیکن وہ اس مقصد کے لیے دستیاب نہیں تھیں۔

پسندیدہ مضامین

پاکستاننگراں سیٹ اپ پر مسلم لیگ (ن) نے اتحادیوں سے مذاکرات کیلئے...