29.9 C
Karachi
Sunday, May 19, 2024

ایم کیو ایم پاکستان کو نئی حلقہ بندیوں کی وجہ سے انتخابات میں تاخیر میں کوئی مسئلہ نظر نہیں آتا

ضرور جانیے

متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے کنوینر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ مردم شماری 2023 کی روشنی میں نئی حلقہ بندیوں کے بعد عام انتخابات کرائے جائیں۔

ایم کیو ایم کے کنوینر نے فاروق ستار کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اگرچہ کراچی کو جلد از جلد شفاف انتخابات کی ضرورت ہے لیکن اگر حلقہ بندیوں میں ہفتوں یا مہینوں کا وقت لگتا ہے تو یہ کوئی بری ڈیل نہیں ہے۔

ایم کیو ایم پاکستان کے کنوینر نے کہا کہ گزشتہ انتخابات میں شہر پر جعلی نمائندے مسلط کیے گئے تھے۔

جلد از جلد انتخابات

انہوں نے کہا کہ کسی اور کو نمائندگی کے حق سے اس طرح محروم نہیں کیا گیا جس طرح ہم تھے، انہوں نے مزید کہا کہ کراچی وہ شہر ہے جس میں جلد از جلد انتخابات کی ضرورت ہے۔

تاہم انہوں نے مزید کہا کہ انتخابات منصفانہ، شفاف، غیر جانبدار اور سب کے لیے قابل قبول ہونے چاہئیں۔

یہ کون لوگ ہیں جو نئے حلقوں کے بجائے پرانے حلقوں پر زور دے رہے ہیں؟

انہوں نے مزید کہا کہ نئی مردم شماری میں لاکھوں نئے ووٹرز کا اندراج کیا گیا ہے، نئی مردم شماری کے بعد نئی حلقہ بندیاں ناگزیر ہیں۔

حالیہ مردم شماری کی بنیاد پر یہ طے کیا گیا تھا کہ کراچی میں صوبائی اسمبلی کی تقریبا چار اور قومی اسمبلی کی ایک نشست میں اضافہ متوقع ہے۔ تاہم، اس بات پر منحصر ہے کہ حلقہ بندیوں کو ڈویژنل یا ضلعی سطح پر نافذ کیا جاتا ہے، یہ اعداد و شمار مختلف ہوسکتے ہیں۔

اگر ڈویژنل سطح پر حلقہ بندیاں کی جائیں تو کراچی کی صوبائی اسمبلی کی نشستوں میں چار اور قومی اسمبلی کی ایک نشست کا اضافہ ہوسکتا ہے۔

اس کے برعکس اگر ضلعی سطح پر حلقہ بندیاں ہوتی ہیں تو کراچی کو صوبائی اسمبلی کی تین اور قومی اسمبلی کی ایک اضافی نشست مل سکتی ہے۔

قومی مردم شماری

ادارہ برائے شماریات پاکستان کی جانب سے 6 اگست کو جاری ہونے والی قومی مردم شماری کی رپورٹ کے مطابق صوبائی اسمبلی میں کراچی کا حصہ 22.23 فیصد اور قومی اسمبلی کی نشستوں میں 47.57 فیصد ہے۔

اس کے علاوہ رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ شہید بینظیر آباد سے قومی اسمبلی کی ایک نشست، حیدرآباد سے صوبائی اسمبلی کی دو، سکھر اور لاڑکانہ سے ایک ایک نشست کراچی منتقل کی جائے گی۔

ضلع جنوبی میں صوبائی اسمبلی کی ایک اور قومی اسمبلی کی ایک نشست سمیت دو نشستیں منتقل کی جائیں گی جبکہ بقیہ تین نشستیں ضلع وسطی، شرقی اور ملیر کی ہوں گی۔

‘ملک سول نافرمانی کی طرف بڑھ رہا ہے’

اسی پریس کانفرنس میں بجلی کے نرخوں میں اضافے اور صارفین پر اس کے بوجھ پر تبصرہ کرتے ہوئے پارٹی رہنما ڈاکٹر فاروق ستار نے حکمرانوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ لوگ باغی ہو رہے ہیں اور یہ ملک سول نافرمانی کی طرف بڑھ رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر یہ رجحان جاری رہا تو ایک ریاست کے اندر ایک ریاست تشکیل دی جائے گی، انہوں نے مزید کہا کہ “جہاں بھی احتجاج ہوگا” ایم کیو ایم پاکستان یکجہتی کے ساتھ کھڑی ہوگی۔

ڈاکٹر فاروق ستار کا کہنا تھا کہ کوئی ایک جماعت کراچی کے مسائل حل نہیں کر سکتی۔

جبکہ مقبول نے کہا کہ پاور سیکٹر میں گردشی قرضہ حکومت کی نااہلی اور ناکامی کی وجہ سے ہے۔

انہوں نے کہا، “یہ [بحران] وفاق اور صوبوں کے مابین تنازعات کا نتیجہ ہیں،” انہوں نے مزید کہا کہ ملک کو “معاشی بحران سے زیادہ ارادے” کے بحران کا سامنا ہے۔

پریس کانفرنس کے دوران مقبول نے کراچی میں بڑھتے ہوئے اسٹریٹ کرائمز پر بھی بات کی۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانایم کیو ایم پاکستان کو نئی حلقہ بندیوں کی وجہ سے انتخابات...