30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

اسحاق ڈار 14.4 ارب روپے کا بجٹ جلد قومی اسمبلی میں پیش کریں گے

ضرور جانیے

اسلام آباد: وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار مالی سال 2023-24 کا وفاقی بجٹ پیش کریں گے جس میں 14.4 ٹریلین روپے کی مجوزہ لاگت آئے گی۔

بجٹ خسارہ جی ڈی پی کے 6 فیصد سے زیادہ ہونے کی وجہ سے حکومت آئندہ عام انتخابات میں رائے دہندگان کو راغب کرنے کے لئے مختلف ٹارگٹڈ اسکیموں پر فنڈز بھی فراہم کرے گی۔

مزید برآں حکومت نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے ٹیکس وصولیوں کا ہدف 9.2 ٹریلین روپے اور نان ٹیکس ریونیو کا ہدف 2.7 ٹریلین روپے مقرر کیا ہے۔

نان ٹیکس ریونیو ہدف کے حصول کے لیے حکومت پیٹرولیم ڈیولپمنٹ لیوی (پی ڈی ایل) کو 50 روپے فی لیٹر سے بڑھا کر 55 سے 60 روپے فی لیٹر کرنے کے لیے فنانس بل میں ترمیم کرکے اختیارات حاصل کرنے کا ارادہ رکھتی ہے تاکہ آئندہ بجٹ میں 870 ارب روپے جمع کیے جاسکیں جبکہ رواں مالی سال کے لیے 550 ارب روپے کے نظر ثانی شدہ تخمینے لگائے گئے تھے۔

بجٹ کے اعداد و شمار کی ساکھ کا فقدان معاشی مینیجرز کو پریشان کرتا رہے گا کیونکہ وہ مالی سال کے دوران تبدیل ہوتے رہیں گے۔

بیل آؤٹ پیکج

اگر آئندہ عام انتخابات کے بعد نئی حکومت اقتدار میں آتی ہے تو اسے نیا بیل آؤٹ پیکج حاصل کرنے کے لیے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ معاشی حقائق کو ہم آہنگ کرنے کے لیے منی بجٹ پیش کرنا پڑے گا۔

ابھی یہ دیکھنا باقی ہے کہ اسحاق ڈار رکے ہوئے پروگرام کی بحالی پر آئی ایم ایف کو مطمئن کرنے کی آخری کوششیں کیسے کریں گے۔ مسلسل تعطل سے زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی خطرے میں پڑ سکتی ہے کیونکہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے ذخائر کم ہو کر 3.9 ارب ڈالر سے نیچے آ گئے ہیں۔

آئی ایم ایف کے ساتھ وسیع تر بجٹ فریم ورک طے کیے بغیر عملے کی سطح کے معاہدے پر دستخط کرنا ناممکن ہو جائے گا، لہذا سب کا انحصار تین شرائط کو پورا کرنے پر ہوگا، جن میں 6 ارب ڈالر کی بیرونی فنانسنگ حاصل کرنا، آئی ایم ایف کی ہدایات کے مطابق اگلا بجٹ پیش کرنا اور مارکیٹ پر مبنی شرح تبادلہ کو یقینی بنانا شامل ہے۔

آئی ایم ایف پروگرام 30 جون کو ختم ہو جائے گا لہٰذا اس میں مزید توسیع کا کوئی امکان نہیں جیسا کہ وزیر خزانہ نے 2022-23 کے اقتصادی سروے کے اجراء کے موقع پر اپنی پریس کانفرنس میں بیان کیا تھا۔

بجٹ کے اعداد و شمار کے تقدس پر ساکھ کا فرق ہے کیونکہ سال کے دوران بار بار تبدیلیاں کی جاتی ہیں، لہذا اگلے مالی سال کے لئے ایک حقیقت پسندانہ بجٹ پیش کرنے کی ضرورت ہے۔

قیادت والی حکومت

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کی قیادت والی حکومت کی مدت 12 اگست کو ختم ہو رہی ہے۔ تاہم حکومت نے آئندہ بجٹ کے لیے ایس ڈی جیز اچیومنٹ پروگرام (ایس اے پی) پر عملدرآمد کے لیے 90 ارب روپے مختص کرنے کی منظوری دے دی ہے جبکہ رواں مالی سال کے لیے نظر ثانی شدہ رقم 116 ارب روپے رکھی گئی تھی۔

حکومت کی اولین ترجیح بیرونی قرضوں کی ادائیگی کو یقینی بنانا ہے جس کے لیے آئندہ بجٹ میں 25 ارب ڈالر درکار ہوں گے۔ ابھی یہ دیکھنا باقی ہے کہ حکومت اتنی بڑی رقم کیسے حاصل کرنے کا ارادہ رکھتی ہے جب کہ اس نے رواں مالی سال کے پہلے دس ماہ میں بیرونی قرضوں اور گرانٹس کی مد میں 22.8 ارب ڈالر کے مجموعی بجٹ اعداد و شمار میں سے صرف 8.1 ارب ڈالر سے کم حاصل کیے تھے۔

مالی رکاوٹیں سنگین چیلنجز پیدا کرتی ہیں کیونکہ وفاقی حکومت کی کل خالص محصولات کی وصولیاں قرضوں کی ادائیگی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے ناکافی رہیں گی۔

صوبوں کو وسائل کی منتقلی اور نان ٹیکس محصولات کو مدنظر رکھتے ہوئے وفاقی حکومت کی مجموعی وصولیاں 6.5 ٹریلین روپے رہیں گی۔

مجموعی قرضوں کی ادائیگی کے لئے 7.5 ٹریلین روپے خرچ ہوں گے۔ اس طرح وفاقی حکومت کو ایک ہزار ارب روپے کا خسارہ نظر آئے گا۔ تاہم دفاع، تنخواہیں، پنشن، سول حکومت چلانے، سبسڈیز، پبلک سیکٹر انٹرپرائزز کو گرانٹس اور دیگر سمیت دیگر تمام اخراجات قرضوں کے ذریعے برداشت کرنا ہوں گے۔

کم از کم اجرت

وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے سروے کے اجراء کے موقع پر اعلان کیا کہ حکومت مالی سال 24 کے بجٹ میں کارکنوں کی تنخواہوں، پنشن اور کم از کم اجرت میں اضافے کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گی۔ پاکستان کو آئندہ مالی سال کے بجٹ خسارے کو پورا کرنے کے لیے ملکی اور غیر ملکی قرضوں کی مد میں 7 ہزار سے 7 ہزار 500 ارب روپے حاصل کرنے ہوں گے۔

آگے کوئی آسان حل نہیں ہے، لہذا معیشت کو بحران کے موڈ سے باہر نکالنے کے لئے گہری ساختی اصلاحات کی ضرورت ہوگی۔

پسندیدہ مضامین

کاروباراسحاق ڈار 14.4 ارب روپے کا بجٹ جلد قومی اسمبلی میں پیش...