25.9 C
Karachi
Friday, April 19, 2024

کچھ ہی عرصے میں پاکستان میں 2 کروڑ لوگوں کا غربت کی لکیر سے نیچے چلے جانے کا خدشہ

ضرور جانیے

لاہور-مختصر عرصے میں پاکستان میں 2کروڑ افراد کے غربت کی لکیر سے نیچے جانے کا خدشہ ہے، بے روزگاری میں سالانہ 10 فیصد اضافے کے باعث ہر سال 30 لاکھ افراد غریب طبقے میں شامل ہونے لگے۔

پاکستان میں متوسط طبقہ 42 فیصد سے کم ہو کر 33 فیصد رہ گیا۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان میں غربت میں اضافے کے حوالے سے انتہائی تشویشناک رپورٹ سامنے آئی ہے۔

اقوام متحدہ کے ماتحت ادارے یو این ڈی پی کی ایک رپورٹ میں پاکستان میں غربت کی شرح میں خطرناک حد تک اضافے اور متوسط طبقے کی شرح میں نمایاں کمی کا انکشاف کیا گیا ہے۔

انکشاف

اقوام متحدہ نے خبردار کیا ہے کہ پاکستان میں متوسط طبقہ 42 فیصد سے کم ہو کر 33 فیصد رہ گیا ہے۔ اقوام متحدہ کے ماتحت ادارے یو این ڈی پی کی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ پاکستان میں معاشی بحران کی وجہ سے متوسط طبقہ نمایاں طور پر کم ہو رہا ہے جبکہ ملک میں نہ صرف غربت بڑھ رہی ہے بلکہ غربت کی لکیر سے نیچے زندگی بسر کر رہی ہے۔ لوگوں کے خرچ کرنے کی شرح میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔

اس حوالے سے ملک کے ماہر اقتصادیات اور سابق وزیر خزانہ حفیظ پاشا کے انکشافات نے بھی خطرے کی گھنٹی بجا دی ہے۔ حفیظ شیخ کے مطابق معاشی عدم استحکام اور قوت خرید میں کمی جیسے عوامل غربت میں اضافے اور متوسط طبقے کی کمی کی بڑی وجوہات ہیں۔ ملک میں مہنگائی کی وجہ سے غربت میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے، بے روزگاری میں سالانہ 10 فیصد اضافے کی وجہ سے ہر سال 30 لاکھ افراد غریب طبقے میں شامل ہو رہے ہیں۔

امیر اپنی آمدنی کا 20 سے 30 فیصد خرچ کرتے ہیں جبکہ متوسط اور غریب اپنی آمدنی کا 70 سے 80 فیصد خوراک پر خرچ کرتے ہیں۔ دولت کی غیر منصفانہ تقسیم کی وجہ سے امیر امیر ہو رہے ہیں۔

اگر یہی صورتحال رہی تو کچھ عرصے میں مزید 2 کروڑ لوگ خط غربت سے نیچے زندگی گزارنے پر مجبور ہوجائیں گے۔ دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف نے بھی دعویٰ کیا ہے کہ 16 ماہ میں 2 کروڑ سے زائد افراد کو خط غربت سے نیچے دھکیل دیا گیا۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانکچھ ہی عرصے میں پاکستان میں 2 کروڑ لوگوں کا غربت کی...