25.9 C
Karachi
Friday, April 19, 2024

خاموش قاتل مرض سے بچنا کیسے ممکن ہے؟ ڈبلیو ایچ او کی رپورٹ جاری

ضرور جانیے

ایک خاموش قاتل بیماری جو دنیا بھر میں ہر تین میں سے ایک شخص کو متاثر کرتی ہے، جس کی وجہ سے فالج، ہارٹ اٹیک، ہارٹ فیل اور گردے کی بیماری جیسی سنگین پیچیدگیاں پیدا ہوتی ہیں۔

یہ انتباہ عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کی جانب سے جاری کردہ ایک رپورٹ میں دیا گیا ہے۔

اس رپورٹ میں عالمی ادارہ صحت نے ہائی بلڈ پریشر کو خاموش قاتل قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ ان چند بڑے عوامل میں سے ایک ہے جو دنیا بھر میں موت اور معذوری کے خطرے کو بڑھاتے ہیں۔

یہ پہلا موقع ہے کہ عالمی ادارہ صحت کی جانب سے ہائی بلڈ پریشر کے عالمی اثرات کی اطلاع دی گئی ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر ٹیڈروس ایڈہانوم نے کہا کہ ہائی بلڈ پریشر کو آسان اور کم قیمت ادویات سے مؤثر طریقے سے کنٹرول کیا جاسکتا ہے لیکن پانچ میں سے صرف ایک مریض ایسا کرسکتا ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے مطابق طرز زندگی کے عوامل کے ذریعے بلڈ پریشر کو کنٹرول میں رکھ کر 2023 سے 2050 کے درمیان 76 ملین اموات کو روکا جا سکتا ہے۔

صحت مند غذائیں

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ لوگ صحت مند غذائیں کھا کر، جسم کا صحت مند وزن برقرار رکھ کر، تمباکو اور شراب سے پرہیز اور باقاعدگی سے ورزش کرکے خود کو ہائی بلڈ پریشر سے محفوظ رکھ سکتے ہیں۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ صحت مند طرز زندگی کے انتخاب کو فروغ دینے کی حکمت عملی پر اسکولوں اور دفاتر میں عمل درآمد کیا جائے جبکہ غذا میں نمک کا استعمال کرکے اس جان لیوا بیماری سے بچنا ممکن ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق ہر بالغ کو 5 گرام سے کم نمک (ایک چائے کے چمچ کے برابر) استعمال کرنا چاہیے لیکن عالمی اوسط فی شخص 10.8 گرام نمک استعمال کرتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق فالج اور ہارٹ اٹیک کے نتیجے میں ہر گھنٹے میں ایک ہزار سے زائد افراد ہلاک ہو جاتے ہیں اور ان میں سے زیادہ تر اموات ہائی بلڈ پریشر کا نتیجہ ہوتی ہیں جن کی روک تھام ممکن ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں 30 سے 79 سال کی عمر کے 44 فیصد افراد ہائی بلڈ پریشر کا شکار ہیں (یہ اعداد و شمار 2019 کے لیے تھے، اس لیے یہ تعداد زیادہ ہوسکتی ہے)۔

عالمی ادارہ صحت کا کہنا ہے کہ اگر صحت مند طرز زندگی اپنایا جائے تو 2040 تک پاکستان میں 8 لاکھ 39 ہزار اموات کو روکا جا سکتا ہے۔

پسندیدہ مضامین

صحتخاموش قاتل مرض سے بچنا کیسے ممکن ہے؟ ڈبلیو ایچ او کی...