29.9 C
Karachi
Sunday, May 19, 2024

گوانتانامو کے جج نے تشدد سے حاصل ہونے والے اعتراف ی بیان کو مسترد کر دیا

ضرور جانیے

امریکی فوج کے ایک جج نے جمعے کے روز پہلی بار فیصلہ سنایا کہ القاعدہ بم دھماکے کے مشتبہ شخص کے اعتراف جرم کو بطور ثبوت استعمال نہیں کیا جا سکتا کیونکہ یہ تشدد سے حاصل کیا گیا تھا، جس سے ممکنہ طور پر 11 ستمبر کے مقدمات کی راہ میں ایک نئی رکاوٹ پیدا ہو سکتی ہے۔

گوانتانامو بے، کیوبا میں امریکی فوجی ٹریبونل کے جج نے کہا ہے کہ یمن میں یو ایس ایس کول پر 2000 میں ہونے والے حملے کے مبینہ ماسٹر مائنڈ عبدالرحیم النشیری کا اعتراف سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی (سی آئی اے) اور فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (ایف بی آئی) کے ہاتھوں کئی سالوں تک بدسلوکی کا شکار ہے۔

جج کرنل لینی اکوسٹا نے لکھا کہ ‘اس طرح کے شواہد کو خارج کرنا سماجی اخراجات کے بغیر نہیں ہے۔

تاہم، اسی حکومت کی طرف سے تشدد کے ذریعہ حاصل کردہ یا تشدد سے حاصل کردہ ثبوتوں کو قبول کرنے کی اجازت دینے کی اجازت دینا جو ملزم کے خلاف مقدمہ چلانے اور پھانسی دینے کی کوشش کرتا ہے، اس کی سماجی قیمت اور بھی زیادہ ہوسکتی ہے۔

نصیری کے وکیل انتھونی نتالے نے کہا کہ جج نے ان اہم شواہد کو خارج کر دیا جو فوجی استغاثہ ناشیری کو مجرم قرار دینے کے لیے استعمال کرنے کی امید کر رہے تھے۔

سزائے موت کا مقدمہ

اس فیصلے کے بعد طویل عرصے سے چل رہا سزائے موت کا مقدمہ سماعت سے پہلے کے مرحلے میں پھنس گیا اور اس بات کا کوئی اشارہ نہیں ملا کہ مکمل ٹرائل کب شروع ہو سکے گا۔

امریکہ پر 11 ستمبر 2001 کو القاعدہ کے حملے کے ملزم ناصری اور پانچ افراد کے وکیل گوانتانامو کی فوجی عدالت میں ایک دہائی سے زیادہ عرصے سے لڑ رہے ہیں تاکہ ان کے خلاف تشدد سے حاصل کیے گئے شواہد کو خارج کیا جا سکے۔

ان چھ افراد کو 2001 کے حملوں کے بعد الگ الگ پکڑا گیا تھا اور تھائی لینڈ اور پولینڈ جیسے ممالک میں سی آئی اے کے زیر انتظام “بلیک سائٹس” کے ذریعے لے جایا گیا تھا جہاں انہیں واٹر بورڈنگ اور جسمانی مار پیٹ سمیت انتہائی تفتیش کی تکنیک سے گزارا گیا تھا۔

گوانتانامو پہنچنے کے بعد، جو ایک الگ تھلگ امریکی بحری اڈہ ہے، نصیری جیسے کچھ لوگوں کے ساتھ ایک بار پھر بدسلوکی کی گئی، جس میں 2007 کے اوائل میں بھی شامل ہے، جب ایف بی آئی نے ان سے پوچھ گچھ کی تھی۔

اگرچہ استغاثہ نے دلیل دی تھی کہ نصیری پہلے کے تشدد کے سیشن کے اثرات سے متاثر نہیں ہوئے تھے ، جج نے فیصلہ سنایا کہ پوچھ گچھ تک مسلسل سخت سلوک سے “سالوں تک جسمانی اور نفسیاتی اذیت” میں اضافہ ہوتا ہے۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ شواہد اس نتیجے کی تائید کرتے ہیں کہ ملزم نے وہی کیا جو اسے کرنے کی تربیت دی گئی تھی۔

بحری جہاز

58 سالہ نصیری پر 12 اکتوبر 2000 کو یو ایس ایس کول پر مہلک حملے کی منصوبہ بندی کا الزام ہے۔ ان پر دو سال بعد اسی علاقے میں خام بردار بحری جہاز لمبرگ پر بم باری کا بھی الزام ہے جس میں ایک شخص ہلاک ہوا تھا۔

نتالے نے زور دے کر کہا کہ اس فیصلے کا اطلاق صرف نصیری کے کیس پر ہوتا ہے اور یہ گوانتانامو کی فوجی عدالت میں مقدمات کی نگرانی کرنے والے کسی بھی دوسرے جج پر پابند نہیں ہے۔ لیکن ان کا کہنا تھا کہ اس سے ‘ایک ایسا سانچہ تیار ہوتا ہے جسے دوسرے لوگ نقل کرنے کی کوشش کر سکتے ہیں۔’

11 ستمبر کے معاملے میں پانچ ملزمین میں سے ایک کی وکیل الکا پردھان نے کہا کہ اس سے پوری فوجی عدالت متاثر ہوگی۔

انہوں نے ایک سوشل میڈیا پوسٹ میں کہا، “آج ناشیری کا فیصلہ بنیادی طور پر پورے فوجی کمیشن کے نظام کو غیر مستحکم کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ نائن الیون اور نصیری دونوں مقدمات میں استغاثہ کے زیادہ تر شواہد سی آئی اے کے بلیک سائٹس پر تشدد سے حاصل کیے گئے تھے جن کے اثرات کو گوانتانامو میں ایف بی آئی کی تفتیش کے ذریعے جان بوجھ کر برقرار رکھا گیا تھا۔

پسندیدہ مضامین

انٹرنیشنلگوانتانامو کے جج نے تشدد سے حاصل ہونے والے اعتراف ی بیان...