15.9 C
Karachi
Friday, February 23, 2024

وہ غذائیں جو جسمانی توانائی بڑھانے کے لیے بہترین ہوتی ہیں

ضرور جانیے

ہم جسمانی توانائی کے لئے کھانے کا استعمال کرتے ہیں

لیکن کیا کوئی ایسی غذائیں ہیں جو جسمانی توانائی میں اضافے کے بجائے کمی کا سبب بنتی ہیں؟

اس کا جواب ہاں میں ہے، اگر آپ بہت زیادہ میٹھے مشروبات اور میٹھے کھانے کا استعمال کرتے ہیں یا یوں کہیں کہ بہت زیادہ چینی کھائیں تو یہ بہت تیزی سے خون میں جذب ہوجاتی ہے اور توانائی کے احساس میں اضافہ کرتی ہے۔

لیکن بہت جلد یہ توانائی تھکاوٹ میں بدل جاتی ہے اور بھوک دوبارہ شروع ہو جاتی ہے۔

پیچیدہ کاربوہائیڈریٹس، صحت مند چکنائی اور پروٹین ہمارے جسم کی جانب سے آہستہ آہستہ ہضم ہوتے ہیں جس سے بھوک کی تکلیف کو روکا جاتا ہے اور جسم کی توانائی کی سطح طویل عرصے تک مستحکم رہتی ہے۔

مندرجہ ذیل غذاؤں کا استعمال جسمانی توانائی کے لئے فائدہ مند ہے۔

جو

جو میں پیچیدہ کاربوہائیڈریٹس ہوتے ہیں جبکہ فائبر اور دیگر غذائی اجزاء بھی زیادہ ہوتے ہیں۔

جو کا دلیہ آہستہ آہستہ ہضم ہوتا ہے اور اسے کھانے کے بعد جسم کی توانائی آہستہ آہستہ بڑھتی جاتی ہے یہی وجہ ہے کہ ناشتے میں اس کا استعمال آپ کو دن بھر جسمانی طور پر متحرک رکھ سکتا ہے۔

انڈے

ایک انڈے میں صرف 70 کیلوریز ہوتی ہیں جبکہ جسم کو 6 گرام پروٹین فراہم کرتی ہے۔

یہ پروٹین جسم کے ایندھن کا کام کرتا ہے جو آہستہ آہستہ جلتا ہے جبکہ انڈے کھانے سے آپ کو زیادہ دیر تک پیٹ بھرا ہوا محسوس ہوتا ہے جو آپ کو ضرورت سے زیادہ کھانے سے روکتا ہے۔

مرغی کا گوشت

مرغی کا گوشت پروٹین کا اچھا ذریعہ ہے جو جسم کی توانائی کو بھی طویل عرصے تک مستحکم رکھتا ہے۔

کلیجی

اگر جسم میں وٹامن بی 12 کی کمی ہوجائے تو جسمانی توانائی کی سطح کم ہوجاتی ہے۔

سیلری اس وٹامن کا ایک اچھا ذریعہ ہے جبکہ پروٹین میں بھی زیادہ ہے ، جس کے فوائد اوپر درج ہیں۔

ویسے گوشت، مرغی، مچھلی اور انڈوں سے بھی وٹامن بی 12 کا حصول ممکن ہے۔

پھلیاں

پھلیاں، مٹر، دال اور سویابین پروٹین کے اچھے ذرائع ہیں جبکہ فائبر بھی زیادہ ہوتا ہے جو آہستہ آہستہ ہضم ہوتا ہے۔

اس کے علاوہ اس غذا میں میگنیشیم بھی ہوتا ہے جو کہ ایک غذائیت ہے جو خلیوں کی توانائی میں اضافہ کرتی ہے۔

مچھلی

مچھلی پروٹین کا بھی اچھا ذریعہ ہے جبکہ اسے کھانے سے جسم کو اومیگا تھری فیٹی ایسڈ ز بھی ملتے ہیں جو امراض قلب کے خطرے کو کم کرتے ہیں۔

اخروٹ

اخروٹ میں اومیگا تھری فیٹی ایسڈ ہوتا ہے جو ہمارا جسم توانائی کے لیے استعمال کرتا ہے۔

تحقیقی رپورٹس کے مطابق معتدل مقدار میں اخروٹ کھانے سے وزن میں اضافہ نہیں ہوتا کیونکہ فائبر کی وجہ سے اخروٹ آہستہ آہستہ ہضم ہوتے ہیں جبکہ ان میں موجود صحت مند چربی معدے کو زیادہ دیر تک بھرا رکھتی ہے۔

کافی

کافی پینے سے جسمانی توانائی میں بھی اضافہ ہوتا ہے اور دماغ متحرک ہوتا ہے، بس بہت زیادہ پینے سے گریز کریں۔

چائے

ایک کپ چائے میں کیلوریز کم ہوتی ہیں اور یہ گرم مشروب سوڈا کا ایک اچھا متبادل ہے۔

چائے میں موجود اجزاء ذہنی چوکسی کو برقرار رکھنے اور جسمانی توانائی بڑھانے میں مدد کرتے ہیں۔

بیریز

بلیو بیری، اسٹرابیری اور بلیک بیری صحت کے لئے بہترین پھل ہیں.

ان میں موجود قدرتی مٹھاس خون میں شکر کی سطح کو نہیں بڑھاتی ہے جبکہ اینٹی آکسائیڈنٹس اور دیگر غذائی اجزاء خلیوں کی صحت کو بہتر بناتے ہیں۔

ڈارک چاکلیٹ

خالص چاکلیٹ میں مٹھاس کم ہوتی ہے جبکہ موڈ اور دماغی افعال پر فائدہ مند اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

اس میں موجود اینٹی آکسائیڈنٹس خلیات کی حفاظت کرتے ہیں، بلڈ پریشر کو کم کرتے ہیں جبکہ خون کی گردش کو بہتر بناتے ہیں۔

تاہم، اس کی ایک بڑی مقدار کھانے سے گریز کرنا چاہئے.

پانی

اگر جسم پانی کی کمی کا شکار ہے تو آپ تھکاوٹ محسوس کرنے لگتے ہیں۔

پانی مختلف غذائی اجزاء کو خلیوں تک پہنچاتا ہے جبکہ زہریلے مادے خارج ہوجاتے ہیں۔

لوگ مناسب مقدار میں پانی پیتے ہیں وہ کم چربی، چینی اور کیلوریز استعمال کرتے ہیں جس سے جسم کی توانائی کو برقرار رکھنے میں مدد ملتی ہے۔

نوٹ: یہ مضمون طبی جرائد میں شائع ہونے والی تفصیلات پر مبنی ہے، قارئین اس سلسلے میں اپنے معالج سے ضرور مشورہ کریں۔

پسندیدہ مضامین

صحتوہ غذائیں جو جسمانی توانائی بڑھانے کے لیے بہترین ہوتی ہیں