23.9 C
Karachi
Tuesday, February 27, 2024

سینیٹ کی قرارداد سے قطع نظر انتخابات 8 فروری کو ہوں گے، ترجمان (ن) لیگ

ضرور جانیے

مسلم لیگ (ن) کی ترجمان مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ سینیٹ کی قرارداد سے قطع نظر انتخابی شیڈول پر عمل کیا جائے گا جبکہ دیگر جماعتیں روتے یا چیختے ہوئے 8 فروری کو انتخابات کرائیں گے۔

لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مریم اورنگزیب کا کہنا تھا کہ گزشتہ روز سینیٹ میں جو قرارداد منظور ہوئی اس کی مخالفت صرف (ن) لیگ نے کی، پی ٹی آئی نے سینیٹ میں قرارداد کی حمایت کی، پی ٹی آئی کی سازش کے تحت پہلے لاہور ہائی کورٹ گئی اور پھر سینیٹ کی قرارداد کی حمایت کی، یہ لوگ اندر خاموش رہتے ہیں اور باہر ڈھول بجاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کے عوام جیلوں میں بیٹھ کر ان لوگوں کو ووٹ نہیں دیں گے اور انہیں دھمکیاں دینا بند کریں گے۔ پاکستان کے عوام انتخابات چاہتے ہیں۔ وہ 9 مئی کو پورے ملک کو جلانا چاہتے تھے، پھر انہوں نے کہا کہ کارکنوں نے یہ کیا، ابکارکنوں کو تکلیف ہو رہی ہے۔

مریم اورنگزیب کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ (ن) انتخابات کے لیے مکمل طور پر تیار ہے، الیکشن کمیشن کی ہدایات کے مطابق (ن) لیگ 8 فروری کو فیصلہ کرے۔ فیصلہ پاکستان کے عوام کو کرنا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سینیٹ کی قرارداد سے قطع نظر انتخابی شیڈول پر عمل کیا جائے گا، دیگر جماعتیں روئیں یا چیخیں، انتخابات 8 فروری کو ہوں گے، مسلم لیگ (ن) کے اجلاسوں کا شیڈول اگلے ہفتے طے کیا جائے گا۔

سینیٹ انتخابات سے متعلق قرارداد

یاد رہے کہ گزشتہ روز ایوان بالا (سینیٹ) نے ملک میں 8 فروری کو ہونے والے عام انتخابات کو کثرت رائے سے ملتوی کرنے کی قرارداد منظور کی تھی۔

چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں قرارداد کی منظوری کے وقت 14 ارکان ایوان میں موجود تھے، خیبر پختونخوا سے آزاد سینیٹر دلاور خان نے انتخابات ملتوی کرنے کی قرارداد پیش کی، بلوچستان عوامی پارٹی (بی اے پی) کے ارکان اور فاٹا سے ایک رکن۔ ہدایت اللہ نے قرارداد کی حمایت کی۔

پی ٹی آئی کے سینیٹر گردیپ سنگھ اور پیپلز پارٹی کے رکن بہرام ند تنگی خاموش رہے جبکہ مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر افنان اللہ نے قرارداد کی مخالفت کی۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانسینیٹ کی قرارداد سے قطع نظر انتخابات 8 فروری کو ہوں گے،...