30.9 C
Karachi
Tuesday, April 23, 2024

طلب میں کمی، اسٹاک زیادہ: پاکستان نے جولائی میں ڈیزل درآمد نہیں کیا

ضرور جانیے

کراچی( این این آئی)معاشی سست روی اور ایران سے اسمگلنگ کی وجہ سے گھریلو طلب میں کمی کے باعث پاکستان نے جولائی میں ہائی اسپیڈ ڈیزل (ایچ ایس ڈی) درآمد نہیں کیا۔

ملک کا تقریبا 70 فیصد ڈیزل ٹرانسپورٹ اور زراعت کے شعبوں میں استعمال ہوتا ہے۔

تاہم، اقتصادی بحران اور سستے ایرانی ایندھن کے مقابلے میں پاکستانی ڈیزل کی اونچی قیمت کی وجہ سے دونوں شعبے بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔

گزشتہ مالی سال کے جولائی کے دوران ملک نے ایک لاکھ 62 ہزار ٹن ایچ ایس ڈی درآمد کی تھی۔

صنعت کے ایک عہدیدار نے کہا، “معاشی سست روی نے ٹرانسپورٹ کے شعبے کے کام کو بری طرح متاثر کیا ہے، جبکہ زراعت کے شعبے میں کھپت بھی کم رہی ہے۔

ڈیزل کی یومیہ کھپت

انہوں نے مزید کہا کہ قانونی چینل سے ڈیزل کی یومیہ کھپت ماضی کے 22 ہزار ٹن سے گھٹ کر 15 ہزار ٹن رہ گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ملک کے سب سے بڑے تیل درآمد کنندہ پاکستان اسٹیٹ آئل (پی ایس او) نے جولائی کے لیے ایچ ایس ڈی درآمدات موخر کردی ہیں کیونکہ مقامی ریفائنریوں کے پاس کم طلب کو پورا کرنے کے لیے کافی اسٹاک موجود ہے۔

ایک اور ذرائع نے بتایا کہ اگر ایچ ایس ڈی درآمد کی جاتی تو ریفائنریوں کو اپنا کام بند کرنا پڑتا کیونکہ ان کی ڈیزل کی پیداوار مقامی ٹرانسپورٹ سیکٹر کے ذریعہ استعمال نہیں ہوتی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پی ایس او کی جانب سے اگست یا ستمبر میں بھی ایچ ایس ڈی درآمد کرنے کا امکان نہیں ہے کیونکہ طلب کا منظر نامہ مایوس کن ہے اور ایرانی ڈیزل کے ساتھ قیمتوں کا فرق بڑھ گیا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ ایران سے ڈیزل کی اسمگلنگ نے زیادہ تر ملک میں ایچ ایس ڈی کی طلب کو زیر غور مہینے میں پورا کیا، کیونکہ پاکستانی ڈیزل کی اونچی قیمت نے ٹرانسپورٹ کے شعبے کو سستے ایرانی ڈیزل کی طرف دھکیل دیا۔

ایچ ایس ڈی کی قیمت

حکومت نے 15 اگست کو ایچ ایس ڈی کی قیمت میں 7 فیصد اضافے کے بعد 293.40 روپے فی لیٹر کردی تھی جبکہ سرحدی علاقوں میں ایرانی ڈیزل تقریبا 200 روپے فی لیٹر فروخت ہورہا ہے۔

صنعت کے ایک عہدیدار نے کہا، “قانونی چینل سے ڈیزل کی کھپت میں ایک تہائی کمی آئی ہے۔

ریفائنریز کو پہلے ہی فرنس آئل نہ اٹھانے کے مسئلے کا سامنا ہے، کیونکہ پاور پلانٹس بھی بجلی کی پیداوار کے لئے ایندھن کے تیل کا استعمال کرنے سے ہچکچا رہے ہیں۔

اس کے نتیجے میں ملک میں فرنس آئل کا ذخیرہ بڑھ گیا ہے، اور ریفائنریوں کو کام جاری رکھنے کے لئے کچھ مقدار برآمد کرنی پڑی ہے۔ عہدیدار نے کہا کہ اگر جولائی میں ڈیزل درآمد کیا جاتا ہے تو ریفائنریوں کو کام بند کرنا پڑے گا ، کیونکہ ان کی پیداوار مقامی نقل و حمل کے شعبے کے ذریعہ استعمال نہیں کی جائے گی۔

پاکستان کے تیل کے شعبے کو فرنس آئل کے بڑھتے ہوئے ذخیرے سے بھی چیلنجز کا سامنا ہے، جسے پاور پلانٹس بجلی کی پیداوار کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ پاور پلانٹس فرنس آئل کی لاگت زیادہ ہونے کی وجہ سے اسے استعمال کرنے سے ہچکچا رہے ہیں جس کی وجہ سے ریفائنریز اپنے اضافی اسٹاک کا کچھ حصہ برآمد کرنے پر مجبور ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ انہیں آنے والے دنوں میں ڈیزل کی کھپت میں کوئی بہتری نظر نہیں آتی کیونکہ ڈیزل کی قیمتوں میں اضافے سے ملک میں ایرانی ڈیزل کی کھپت کو مزید فروغ ملے گا۔

ایک عہدیدار نے کہا، “اس بات کا بہت کم امکان ہے کہ پی ایس او اگست یا اگلے مہینے میں ایچ ایس ڈی درآمد کرے گا، کیونکہ قانونی چینل سے ڈیزل کی کھپت کی موجودہ صورتحال ہے۔

پسندیدہ مضامین

کاروبارطلب میں کمی، اسٹاک زیادہ: پاکستان نے جولائی میں ڈیزل درآمد نہیں...