30.9 C
Karachi
Tuesday, April 23, 2024

الیکشن میں تاخیر سے متعلق کیس کی سماعت کرنے والی سپریم کورٹ کی تین رکنی بنچ کا بائیکاٹ

ضرور جانیے

الیکشن میں تاخیر سے متعلق کیس کی سماعت کرنے والی سپریم کورٹ کی تین رکنی بنچ کا بائیکاٹ.لندن: مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف کی جانب سے حکمران اتحاد کی جانب سے طے شدہ نئی لائحہ عمل کی حمایت کرنے کے بعد وزیراعظم شہباز شریف کی زیر قیادت حکومت نے الیکشن میں تاخیر سے متعلق کیس کی سماعت کرنے والے سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ کے بائیکاٹ کا فیصلہ کیا ہے۔

لاہور-وزیراعظم شہباز شریف سے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے رہنماؤں نے ملاقات کی۔

جیو نیوز ذرائع کے مطابق سابق وزیراعظم نے ماڈل ٹاؤن میں وزیراعظم کی رہائش گاہ پر بلائے گئے اجلاس میں یہ حکمت عملی پیش کی جس میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی جانب سے حکومت پر بڑھتے ہوئے قانونی دباؤ کا مقابلہ کرنے کے طریقوں پر غور کیا گیا۔

سپریم کورٹ میں پنجاب اسمبلی کے انتخابات میں تاخیر سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی جس میں ازخود نوٹس لینے پر تنازع پیدا ہوگیا۔

ذرائع کے مطابق اجلاس نواز شریف سے یہ سننے کے لیے ہوا کہ آیا حکومت کو جاری عدالتی طریقہ کار میں تعاون کرنا چاہیے یا نہیں۔

نواز شریف کی دوٹوک رائے یہ تھی کہ تین رکنی بینچ سے انصاف کی کوئی توقع نہیں ہے۔

ذرائع نے نواز شریف کے حوالے سے بتایا کہ تین رکنی بینچ میں سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس جسٹس (ر) ثاقب نثار کی سربراہی میں جسٹس (ر) ثاقب نثار شامل ہیں۔

مشاورتی اجلاس میں اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ اٹارنی جنرل آف پاکستان منصور عثمان اعوان عدالت میں پیش ہوں گے اور تین رکنی بینچ پر عدم اعتماد کا اظہار کیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پی ڈی ایم کی قیادت نے بینچ کے بائیکاٹ کے مشورے کی بھی حمایت کی جس کی نواز شریف نے توثیق کی اور اس بات کا اعادہ کیا کہ بینچ کا بائیکاٹ کرنے کے علاوہ نقصان پر قابو پانے کے لیے کوئی دوسرا آپشن نہیں بچا۔

نواز شریف کا یہ بھی کہنا تھا کہ حکومت کے جائز مطالبے کے خلاف فل کورٹ بینچ کی عدم تشکیل ایک مخصوص ایجنڈے کی نشاندہی کرتی ہے۔

جمعے کے روز حکومت کی جانب سے فل کورٹ بنانے کی درخواست بھی عدالت نے مسترد کر دی تھی جس کے بعد موجودہ بحران مزید گہرا ہو گیا تھا کیونکہ سابق وزیر اعظم نواز شریف نے بینچ کو مسترد کر دیا تھا۔

لندن میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نواز شریف نے صورتحال پر اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے پاکستان کے عوام کے ساتھ کھیلا جانے والا ‘خوفناک مذاق’ قرار دیا۔ انہوں نے قوم پر زور دیا کہ وہ بحرانوں کی شدت سے بیدار ہو۔

نواز شریف

نواز شریف نے انہیں نااہل قرار دینے کے فیصلے کے خلاف بھی بات کی اور کہا کہ اس سے ملک کے مستقبل کو نقصان پہنچا ہے۔

انہوں نے اس حقیقت پر افسوس کا اظہار کیا کہ پاکستان قرضوں اور غیر ملکی امداد پر انحصار کرنے پر مجبور ہے۔ نواز شریف نے اپنی نااہلی کے ذمہ داروں سے جواب طلب کرتے ہوئے کہا کہ یہ فیصلہ ایک شخص کی خاطر کیا گیا۔

پی ٹی آئی نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کی جانب سے دونوں صوبوں میں انتخابات ملتوی کرنے کے 22 مارچ کے حکم کو چیلنج کیا تھا۔ سپریم کورٹ کی جانب سے آرٹیکل 184 (3) کے تحت تمام کارروائی ملتوی کرنے کے حکم کے بعد دو ججوں کی جانب سے خود کو کیس سے الگ کرنے کے بعد درخواست کی سماعت کے لیے تشکیل دی گئی پانچ رکنی بنچ کو دو بار تحلیل کر دیا گیا تھا۔

چیف جسٹس

چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں جسٹس اعجاز الاحسن اور جسٹس منیب اختر پر مشتمل تین رکنی بینچ تحریک انصاف کی درخواست پر سماعت کر رہا ہے۔

جمعے کے روز پارلیمنٹ نے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کے اختیارات کو کم کرنے کے لیے ایک نیا قانون منظور کیا، یہ اقدام اعلیٰ عدلیہ اور حکومت کے درمیان تنازع کے درمیان سامنے آیا ہے۔

تارڑ نے یہ بل بدھ کو پارلیمنٹ کے ایوان زیریں میں پیش کیا تھا اور جمعرات کو سینیٹ یا ایوان بالا نے اسے منظور کیا تھا۔

تارڑ نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ پارلیمنٹ نے بل منظور کر لیا ہے۔

واضح رہے کہ شہباز شریف کی حکومت اس وقت سپریم کورٹ میں دو صوبوں میں قبل از وقت انتخابات کے انعقاد کے معاملے پر تنازع میں گھری ہوئی ہے جہاں سابق وزیراعظم عمران خان نے رواں سال کے اوائل میں قبل از وقت انتخابات کرانے کے لیے بلدیاتی حکومتوں کو تحلیل کر دیا تھا۔

حکومت کا کہنا ہے کہ پہلے قبل از وقت انتخابات کروانا اور پھر اس سال ایک اور عام انتخابات کروانا معاشی طور پر قابل عمل نہیں ہے۔

سپریم کورٹ نے رواں ماہ کے اوائل میں حکم دیا تھا کہ دونوں صوبوں میں 30 اپریل تک دونوں بلدیاتی حکومتوں کی تحلیل کے 90 دن کے اندر قبل از وقت انتخابات کرائے جائیں۔

بل کی ایک کاپی کے مطابق نئے مسودہ قانون، جسے منظوری کے لیے صدر پاکستان کو بھیجا گیا ہے، میں چیف جسٹس کے پینل تشکیل دینے، اپیلوں کی سماعت کرنے یا اپنی ٹیم کے ججوں کو مقدمات تفویض کرنے کے اختیارات میں کٹوتی کی گئی ہے۔

یہ کام

یہ کام اب چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی کمیٹی کرے گی جس میں ان کے دو سینئر ترین جج ممبر ہوں گے۔

سپریم کورٹ میں ہر وجہ، اپیل یا معاملے کو سنیارٹی کے لحاظ سے چیف جسٹس آف پاکستان اور دو سینئر ججوں پر مشتمل کمیٹی کی جانب سے تشکیل دیا گیا بینچ سنے گا اور نمٹائے گا۔

پسندیدہ مضامین

سیاستالیکشن میں تاخیر سے متعلق کیس کی سماعت کرنے والی سپریم کورٹ...