29.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

ارشد شریف کیس: مقتول صحافی کی والدہ نے سپریم کورٹ سے تحریک انصاف کے سربراہ اور دیگر کو تحقیقات میں شامل کرنے کا مطالبہ کر دیا

ضرور جانیے

اسلام آباد-معروف صحافی ارشد شریف کی والدہ نے سپریم کورٹ سے درخواست کی ہے کہ ان کے بیٹے کے قتل کی تحقیقات کرنے والی خصوصی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کو ہدایت کی جائے کہ تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان اور دیگر 4 افراد کو تحقیقات میں شامل کیا جائے۔

ان کی والدہ نے ایک درخواست میں کل پانچ لوگوں کا نام لیا ہے جو سازش اور قتل میں ملوث افراد کے بارے میں دعویٰ کرتے پائے گئے ہیں اور اس بات پر زور دیا کہ انہیں اصل مجرموں کے خلاف ثبوت جمع کرنے کے لئے تحقیقات میں شامل ہونے کی ضرورت ہے۔

اس نے عمران کا نام لیا ہے۔ پی ٹی آئی رہنما فیصل واوڈا اور مراد سعید۔ پی ٹی آئی کی جانب جھکاؤ رکھنے والے صحافی عمران ریاض خان جن کے ٹھکانے ابھی تک معلوم نہیں ہیں۔ اے آر وائی کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر سلمان اقبال کو بھی تحقیقات میں شامل ہونے کی ضرورت ہے۔

انکوائری رپورٹ

درخواست میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ماں کو فیکٹ فائنڈنگ انکوائری رپورٹ اور جے آئی ٹی کی جانب سے جمع کرائی گئی رپورٹ تک رسائی نہیں دی گئی جس کی وجہ سے انہیں تحقیقات میں شامل افراد کے بارے میں اندھیرے میں رکھا گیا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ منصفانہ تحقیقات مکمل کرنے کے لیے یہ جے آئی ٹی کی ذمہ داری ہے کہ وہ ان افراد کے ساتھ ساتھ اس حوالے سے دعوے کرنے والے دیگر افراد سے بھی تفتیش کرے۔

6 جون کو دائر کی گئی ایک اور درخواست میں ان کے وکیل راجہ عبدالغفور نے سپریم کورٹ سے استدعا کی کہ فیکٹ فائنڈنگ رپورٹ کی کاپی انہیں فراہم کی جائے یا ان کے ساتھی وکیل شوکت عزیز صدیقی کو نوٹ لینے کی اجازت کے ساتھ اس کا جائزہ لینے کی اجازت دی جائے۔

درخواست میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ سماعت کے دوران بھی یہی درخواست کی گئی تھی لیکن اٹارنی جنرل کی عدم دلچسپی کی وجہ سے اس حوالے سے کوئی حکم جاری نہیں کیا گیا۔

بنچ نے زور دے کر کہا، ‘اس معزز عدالت کے سامنے پیش کیے گئے کسی بھی مواد کو خفیہ نہیں رکھا جا سکتا ہے، اگر جانچ ایجنسی نے کوئی لاپرواہی کا کام کیا ہے۔

اس میں مزید کہا گیا ہے، ‘ان رپورٹوں کی عدم فراہمی درخواست گزار کے زخم پر نمک چھڑکنے کے مترادف ہے۔

پچھلی تحقیقات کی پیش رفت

گزشتہ سال دسمبر میں انٹیلی جنس بیورو (آئی بی) اور فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) کے افسران پر مشتمل دو رکنی فیکٹ فائنڈنگ ٹیم اس نتیجے پر پہنچی تھی کہ نواز شریف کا قتل ‘منصوبہ بند ٹارگٹ کلنگ’ تھا جس میں مبینہ طور پر ‘بین الاقوامی کردار’ شامل تھے۔

جنوری کی سماعت میں سپریم کورٹ نے تفتیش کاروں سے کہا تھا کہ وہ قتل کی تحقیقات میں اقوام متحدہ کو شامل کرنے کے امکان پر وزارت خارجہ کے ساتھ تبادلہ خیال کریں۔

اس نے یہ بھی کہا تھا کہ عدالت جانچ میں مداخلت نہیں کرے گی۔ بنچ نے کہا کہ عدالت جے آئی ٹی کو تحقیقات کی آزادی دے رہی ہے اور اس معاملے کی شفاف تحقیقات ہونی چاہیے کیونکہ عدالت شفاف تحقیقات کے بارے میں بہت سنجیدہ ہے۔

فروری میں سپریم کورٹ کو بتایا گیا تھا کہ کینیا کے حکام تحقیقاتی ٹیم کو ‘مکمل رسائی’ نہیں دے رہے ہیں جو تحقیقات کے لیے کینیا اور متحدہ عرب امارات گئی تھی جبکہ متحدہ عرب امارات کے حکام نے بھی ٹیم کو وہاں تحقیقات کرنے کی اجازت نہیں دی تھی۔

تنبیہ

اس پر جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی نے ایڈیشنل اٹارنی جنرل کو تنبیہ کی کہ وہ عدالت کے ساتھ نہ کھیلیں۔ جج نے کہا، ‘یہ (تحقیقات کا) پہلا مرحلہ تھا جو مکمل نہیں ہو سکا۔ کیا جے آئی ٹی کینیا اور متحدہ عرب امارات میں تفریح کے لیے گئی تھی؟

8 مارچ کو خصوصی جے آئی ٹی نے سپریم کورٹ میں پیشرفت رپورٹ پیش کی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ اس قتل میں کینیا، دبئی اور پاکستان کے کرداروں کے بین الاقوامی کردار سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔

مارچ میں ہونے والی ایک اور سماعت میں چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے تھے کہ اہم سوال یہ ہے کہ صحافی ملک کیوں چھوڑ کر گئے اور یہ واضح ہونا چاہیے کہ اس پیش رفت سے قبل کیا ہوا تھا۔

گزشتہ ماہ سپریم کورٹ نے فیکٹ فائنڈنگ کمیٹی کی ابتدائی رپورٹ میڈیا کو جاری کرنے پر بھی ناراضگی کا اظہار کیا تھا۔

قتل

نواز شریف کے خلاف متعدد مقدمات درج ہونے کے بعد وہ گزشتہ سال اگست میں پاکستان چھوڑ کر چلے گئے تھے۔ بتایا گیا تھا کہ وہ ابتدائی طور پر متحدہ عرب امارات (یو اے ای) میں مقیم تھے جس کے بعد وہ کینیا چلے گئے، جہاں انہیں گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا۔

ابتدائی طور پر کینیا کے ذرائع ابلاغ نے مقامی پولیس کے حوالے سے بتایا تھا کہ نواز شریف کو پولیس نے ‘غلط شناخت’ کے معاملے میں گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔

تاہم بعد ازاں کینیا کے ذرائع ابلاغ کی رپورٹوں میں قتل کے واقعات کا احاطہ کرتے ہوئے کہا گیا کہ خیال کیا جاتا ہے کہ نواز شریف کے قتل کے وقت ان کی گاڑی میں سوار ایک شخص نے نیم فوجی جنرل سروس یونٹ کے افسران پر گولی چلائی تھی۔

بعد ازاں حکومت پاکستان نے ایک ٹیم تشکیل دی جو اس قتل کی تحقیقات کے لیے کینیا گئی تھی۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانارشد شریف کیس: مقتول صحافی کی والدہ نے سپریم کورٹ سے تحریک...