29.9 C
Karachi
Sunday, May 19, 2024

پٹرولیم مصنوعات میں 15 روپے لیٹر اضافہ متوقع، ڈیلرز نے ذخیرہ کرلیا

ضرور جانیے

اسلام آباد: وفاقی حکومت نے تیل کے بحران کا خدشہ ظاہر کیا ہے کیونکہ ملک میں کچھ مقامات پر کچھ آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کے ریٹیل آؤٹ لیٹس مبینہ طور پر خشک پائے گئے ہیں۔

وزارت پٹرولیم نے چیئرمین اوگرا کو خط لکھ کر ڈرائی ریٹیل دکانیں چلانے والی کمپنیوں کے خلاف ریگولیٹری ایکشن لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ 12 ستمبر کو لکھے گئے خط میں ڈائریکٹر جنرل آئل پیٹرولیم ڈویژن عمران احمد نے چیئرمین اوگرا کو آگاہ کیا کہ وزیر توانائی نے پیش رفت کا سنجیدگی سے نوٹس لیا ہے اور ہدایت کی ہے کہ اوگرا کو متحرک کیا جائے۔

اوگرا، آئل کمپنیز ایڈوائزری کونسل کی روزانہ کی رپورٹس کا حوالہ دیتے ہوئے ڈی جی آئل کو لکھے گئے خط میں کہا گیا ہے کہ اوگرا کی ٹیم اس بات کو یقینی بنائے کہ تمام مارکیٹنگ کمپنیاں اپنے ریٹیل آؤٹ لیٹس خالی نہ رکھیں اور پیٹرولیم مصنوعات کی فراہمی جاری رکھیں۔

اس بات پر بھی روشنی ڈالی گئی کہ اس وقت ملک میں پٹرول اور ہائی اسپیڈ ڈیزل کا وافر اسٹاک موجود ہے۔

حوصلہ شکنی

لہٰذا پیٹرولیم مصنوعات کے ذخیرے کی کسی بھی کوشش کی سختی سے حوصلہ شکنی کی جائے اور اس کی روک تھام کی جائے، خط میں مزید کہا گیا ہے کہ ایسا کرنے والی کسی بھی مارکیٹنگ کمپنی کے خلاف ریگولیٹری کارروائی کی جاسکتی ہے۔ اسٹاک سے کم تیل رکھیں.

ڈی جی آئل نے خط کی کاپیاں آئل کمپنیز ایڈوائزری کونسل کے سیکرٹری جنرل اور آئل مارکیٹنگ ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین کو بھی ارسال کردی ہیں۔

ذرائع کے مطابق پٹرول کا ذخیرہ 4 لاکھ 16 ہزار میٹرک ٹن اور ہائی سپیڈ ڈیزل کا اسٹاک 4 لاکھ 60 ہزار میٹرک ٹن تھا۔ دوسری بات یہ ہے کہ قیمتوں میں دوبارہ 15 روپے فی لیٹر تک اضافے کا امکان ہے، پیٹرولیم ڈیلرز نے انوینٹری کا فائدہ اٹھانے کے لیے تیل ذخیرہ کرنا شروع کر دیا ہے۔

ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ ایل سیز کھولنے میں مسائل کی وجہ سے کچھ کمپنیوں نے ڈرائی امپورٹ آؤٹ لیٹس حاصل کیے تھے، دوسری جانب سرکاری ذرائع کا کہنا ہے کہ آئل کمپنیوں نے 18 روپے فی لیٹر تک انوینٹری حاصل کی ہے۔

پسندیدہ مضامین

کاروبارپٹرولیم مصنوعات میں 15 روپے لیٹر اضافہ متوقع، ڈیلرز نے ذخیرہ کرلیا