30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

آئی ایم سی اور ٹویوٹا مصر کے درمیان آٹو پارٹس برآمد کرنے کا معاہدہ

ضرور جانیے

پاکستان کی سب سے بڑی آٹومیکر انڈس موٹر کمپنی نے ٹویوٹا مصر کے ساتھ آٹو مصنوعات کی برآمد کے معاہدے پر دستخط کیے ہیں جس کا آغاز جولائی میں ہوگا۔

آٹو مینوفیکچرنگ کمپنی نے منگل کے روز ایک بیان میں کہا کہ “آئی ایم سی ٹویوٹا مصر کے ساتھ جولائی 2023 سے اعلی معیار کی مصنوعات برآمد کرنے کے معاہدے پر دستخط کرکے عالمی سپلائی چین کے دروازے کھولنے والا پہلا آٹو مینوفیکچرر بن گیا ہے۔

یہ پیش رفت ایک ایسے اہم وقت میں سامنے آئی ہے جب نقدی کے بحران سے دوچار ملک کی آٹو انڈسٹری درآمدات کی رکاوٹوں اور محدود زرمبادلہ کے ذخائر کی وجہ سے انوینٹری کی کمی کا سامنا کر رہی ہے۔

پاکستان میں ٹویوٹا گاڑیاں بنانے والی کمپنی نے کہا کہ “سیمی پروسیسڈ خام مال کی پہلی کھیپ جو ٹویوٹا مصر بھیجی جائے گی، پاکستان میں کسی بھی او ای ایم [اصل سازوسامان بنانے والے] کی جانب سے برآمدی نقطہ نظر سے دور کا آغاز ہوگی اور اس سمت میں جاری رکھنے کا منصوبہ ہے۔

ٹویوٹا مصر کے ساتھ شراکت داری آٹو انڈسٹری ڈویلپمنٹ اینڈ ایکسپورٹ پالیسی (اے آئی ڈی ای پی) 2021-2026 کے تحت طے شدہ ضروریات کو پورا کرنے کے لیے پہلا قدم ہے۔

اہم سنگ میل

یہ ایک اہم سنگ میل ہے جو نہ صرف آئی ایم سی کی برآمدی صلاحیتوں میں اضافہ کرے گا اور آئی ایم سی کے معیار کے معیار کا ثبوت ہوگا بلکہ پاکستان کی بڑھتی ہوئی آٹو انڈسٹری کی ترقی میں بھی اہم کردار ادا کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ میک ان پاکستان کے خواب کو بین الاقوامی سرحدوں کو عبور کرتے ہوئے دیکھنا نہ صرف ہمارے لئے بلکہ ملک کے لئے بھی ایک بڑا لمحہ ہے۔ آئی ایم سی کے سی ای او علی اصغر جمالی نے کہا کہ ٹویوٹا کی عالمی سپلائی چین کا حصہ بننا آئی ایم سی کے پاکستان کو دنیا کے نقشے پر دیکھنے اور اس کی مجموعی معیشت کو مستحکم کرنے کے عزم کا اعادہ ہے۔

یہ تعاون آئی ایم سی کے لئے ایک کامیابی ہے اور اپنے عالمی اثرات قائم کرنے کی طرف ایک اہم قدم ہے۔ یہ پہلی بار ہے کہ کسی بھی مقامی آٹوموٹو حصے کو ٹویوٹا گلوبل سپلائی چین کا حصہ بنایا گیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس اقدام سے افریقہ اور پاکستان کے درمیان رابطے کو تقویت ملے گی اور حکومت کی “افریقہ دیکھو” پالیسی کے تحت تجارتی روابط کو فروغ ملے گا۔

جمالی نے بتایا کہ کمپنی اس تعاون سے اپنی صلاحیتوں کو مزید بڑھانے کی خواہاں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم پاکستان کی آٹو انڈسٹری کو دنیا بھر میں قابل اعتماد اور معیار کی علامت کے طور پر پیش کرنے کے لئے اس سے آگے بڑھنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

بلند افراط زر

پاکستان کے کم زرمبادلہ کے ذخائر، روپے کی قدر میں کمی اور بلند افراط زر نے مجموعی طور پر ملک میں گاڑیوں کی فروخت کو متاثر کیا ہے۔ درآمدی پابندیوں نے تقریبا تمام آٹو مینوفیکچررز کو متعدد بار پیداوار روکنے پر مجبور کیا۔ 23 جون ، 2023 کو ، آئی ایم سی نے “ناکافی انوینٹری سطح” پر سال کے پانچویں پلانٹ کی بندش کا اعلان کیا۔

مرکزی بینک کے مطابق، اس نے ملک میں درآمدی پابندیوں کو ختم کر دیا ہے – ایک ایسا اقدام جو بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کو 3 ارب ڈالر کے قلیل مدتی معاہدے کی منظوری دینے کے لئے خوش کرتا ہے. درآمدات پر کوئی پابندی نہ ہونے کی وجہ سے آئی ایم سی آٹو مصنوعات کی اپنی برآمدات کو فروغ دینے کا ارادہ رکھتا ہے۔

پسندیدہ مضامین

کاروبارآئی ایم سی اور ٹویوٹا مصر کے درمیان آٹو پارٹس برآمد کرنے...