30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

متوازن غذا ٹائپ ٹو ذیابیطس پر قابو پانے میں مددگار

ضرور جانیے

ماہرین نے جمعرات کو ملک میں ذیابیطس کے مریضوں کی بڑھتی ہوئی تعداد پر گہری تشویش کا اظہار کیا اور غیر فعال طرز زندگی، غیر صحت مند کھانے پینے کی عادات اور ورزش اور جسمانی سرگرمی کی کمی کو روکنے کے لئے میڈیا کی مدد سے کمیونٹیز کو آگاہ کرنے کی ضرورت پر زور دیا، جو اس بیماری کی روک تھام کے اہم عوامل میں سے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ذیابیطس میں مبتلا افراد کی تعداد میں ہر سال اضافہ ہورہا ہے جبکہ ملک میں ذیابیطس میں مبتلا افراد کی اوسط عمر بھی کم ہو رہی ہے جس کی وجہ سے موٹاپے کی وجہ سے نوجوانوں میں ذیابیطس کی تشخیص معمول بن چکی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ذیابیطس کی پیچیدگیوں کو روکنے اور صحت مند نتائج حاصل کرنے کے لئے ابتدائی تشخیص اور علاج کلیدی عناصر ہیں۔

وٹامنز، منرلز اور فائبر

ان کا کہنا تھا کہ ‘انتہائی پروسیسڈ غذائیں جن میں کیلوریز زیادہ ہوتی ہیں اور وٹامنز، منرلز اور فائبر کی مقدار کم ہوتی ہے وہ جسم میں تیزی سے ٹوٹ جاتی ہیں اور خون میں شکر کی سطح میں تیزی سے اضافے کا سبب بن سکتی ہیں۔’

والدین کو چاہیے کہ وہ بچوں کو غذائیت سے بھرپور غذائیں کھانے کی ترغیب دیں، پھلوں، سبزیوں، کم چربی والی ڈیری، پورے اناج اور دبلے پروٹین پر توجہ مرکوز کریں، چینی سے میٹھے مشروبات، جیسے فریزی ڈرنکس اور سوڈا کے استعمال کو محدود کریں۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اضافی وزن اور جسم کی چربی ٹائپ ٹو ذیابیطس کے خطرے کے عوامل ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ذیابیطس کے مریضوں کی شرح دنیا بھر میں سب سے زیادہ ہے۔

انہوں نے خاندانوں، اسکولوں، صحت کی دیکھ بھال فراہم کرنے والوں، برادریوں، میڈیا، فوڈ انڈسٹری اور حکومت پر زور دیا کہ وہ اس بیماری پر قابو پانے کے لئے مل کر کام کریں۔

ذیابیطس کی تمام اقسام یکساں طور پر سنگین ہوتی ہیں اور اگر مناسب طریقے سے کنٹرول نہ کیا جائے تو یہ سنگین پیچیدگیوں کا باعث بن سکتی ہے۔

ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ٹائپ ون ذیابیطس کی روک تھام ممکن نہیں لیکن انسولین کے انجکشن سے اس کا علاج کیا جاسکتا ہے۔

پسندیدہ مضامین

صحتمتوازن غذا ٹائپ ٹو ذیابیطس پر قابو پانے میں مددگار