30.9 C
Karachi
Thursday, June 13, 2024

پاکستان میں 25 جون سے مون سون سے متعلق واقعات میں 50 افراد ہلاک

ضرور جانیے

لاہور-پاکستان میں مون سون بارشوں کے باعث مختلف حادثات میں 8 بچوں سمیت کم از کم 50 افراد جاں بحق ہوگئے۔

ہر سال جون اور ستمبر کے درمیان مون سون کی ہوائیں جنوبی ایشیا میں بارشیں لاتی ہیں جو اس خطے کی سالانہ بارشوں کا 70 سے 80 فیصد بنتی ہیں۔

مون سون کی یہ بارشیں اس خطے کے لئے ایک مخلوط نعمت ہیں۔

ایک طرف، وہ تقریبا دو ارب آبادی والے خطے میں لاکھوں کسانوں کے ذریعہ معاش اور غذائی تحفظ کے لئے اہم ہیں۔ دوسری طرف، وہ لینڈ سلائیڈنگ اور سیلاب لاتے ہیں۔

نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کے ایک عہدیدار نے اے ایف پی کو بتایا کہ 25 جون کو مون سون کے آغاز کے بعد سے اب تک پاکستان بھر میں بارشوں سے متعلق مختلف واقعات میں 50 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

سرکاری اعداد و شمار کے مطابق زیادہ تر ہلاکتیں مشرقی پنجاب میں ہوئیں اور ان کی بنیادی وجہ کرنٹ لگنے اور عمارتیں گرنے کی وجہ سے ہوئیں۔

بلال احمد فیضی

ایمرجنسی سروس ریسکیو 1122 کے ترجمان بلال احمد فیضی کے مطابق خیبر پختونخوا کے ضلع شانگلہ میں لینڈ سلائیڈنگ سے 8 بچوں کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ امدادی کارکن اب بھی ملبے میں پھنسے دیگر بچوں کی تلاش کر رہے ہیں۔

پاکستان کے دوسرے سب سے بڑے شہر لاہور میں حکام کا کہنا ہے کہ بدھ کے روز ریکارڈ توڑ بارش ہوئی جس سے سڑکیں دریاؤں میں تبدیل ہو گئیں اور اس ہفتے تقریبا 35 فیصد بجلی اور پانی سے محروم ہو گئے۔

محکمہ موسمیات نے آئندہ چند روز میں ملک بھر میں مزید موسلا دھار بارشوں کی پیش گوئی کرتے ہوئے پنجاب کے بڑے دریاؤں کے کیچمنٹ ایریاز میں ممکنہ سیلاب کا انتباہ دیا ہے۔

صوبے کی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی نے جمعے کے روز کہا کہ وہ آبی گزرگاہوں کے کنارے رہنے والے لوگوں کو منتقل کرنے کے لیے کام کر رہی ہے۔

سائنس دانوں نے کہا ہے کہ آب و ہوا کی تبدیلی موسمی بارشوں کو بھاری اور زیادہ غیر متوقع بنا رہی ہے۔

گزشتہ موسم گرما میں مون سون کی غیر معمولی بارشوں نے پاکستان کا ایک تہائی حصہ زیر آب لا کھڑا کیا تھا جس سے 20 لاکھ گھروں کو نقصان پہنچا تھا اور 1700 سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔

گزشتہ ماہ کے اوائل میں ملک کے شمال مغربی علاقے میں آنے والے طوفانوں میں آٹھ بچوں سمیت کم از کم 27 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

حکام کے مطابق پاکستان دنیا کی پانچویں سب سے بڑی آبادی والا ملک ہے اور عالمی گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج کے ایک فیصد سے بھی کم کا ذمہ دار ہے۔

تاہم ، یہ گلوبل وارمنگ کی وجہ سے شدید موسم کے لئے سب سے زیادہ غیر محفوظ ممالک میں سے ایک ہے۔

پسندیدہ مضامین

پاکستانپاکستان میں 25 جون سے مون سون سے متعلق واقعات میں 50...